ناقص بناسپتی کینسر کا باعث بن سکتا ہے ،پی سی ایس آئی آر کی رپورٹ پر ہائی کورٹ نے پنجاب فوڈ اتھارٹی کے خلاف درخواستیں مسترد کردیں

ناقص بناسپتی کینسر کا باعث بن سکتا ہے ،پی سی ایس آئی آر کی رپورٹ پر ہائی کورٹ ...
ناقص بناسپتی کینسر کا باعث بن سکتا ہے ،پی سی ایس آئی آر کی رپورٹ پر ہائی کورٹ نے پنجاب فوڈ اتھارٹی کے خلاف درخواستیں مسترد کردیں

  


لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس عابد عزیز شیخ نے پنجاب فوڈ اتھارٹی کی کاروائیوں کے خلاف بناسپتی فروخت کرنے والی کمپنیوں کی درخواست مسترد کر تے ہوئے ریمارکس دیئے کہ عدالت ناقص بناسپتی کی فروخت کی اجازت نہیں دے سکتی، یہ کمپنیاں طے شدہ معیار برقرار رکھنے کی پابند ہیں۔

شادی کی تقریب میں آنے والی نوعمر لڑکی پر دولہا کے کتے نے حملہ کردیا، اور پھر اگلے ہی لمحے ایسا کام ہوگیا کہ ہر مہمان کتے کو داد دینے پر مجبور ہوگیا، کتے نے کیا کارنامہ سرانجام دے دیا؟ جان کر آپ بھی شاباش دینے لگیں گے

اس سے قبل پنجاب فوڈ اتھاٹی کے وکیل میاں افتخار نے بناسپتی بنانے والی ملوں سے حاصل کئے جانے والے نمونوں کی پی سی ایس آئی آر کی رپورٹیں عدالت میں پیش کیں۔انہوں نے بتایا کہ جن کمپنیوں کے بناسپتی کوتلف کرنے کا حکم دیا گیا ہے ان میں نکل اور کاپر پر آکسائیڈ کی مقدار زیادہ پائی گئی ہے،انہوں نے بتایا کہ نکل اور کاپر پر آکسائیڈ کینسر جیسے موذی مرض کے بڑھنے کی سب سے بڑی وجہ ہے۔درخواست گزار گھی ملوں کے وکلاءنے عدالت کو بتایا کہ فوڈ اتھارٹی پنجاب نے مارکیٹ میں فروخت ہونے والے گھی کے مختلف نمونہ جات حاصل کر کے ناقص پائے جانے والے گھی کو مارکیٹ سے اٹھانے اور تلف کرنے کا حکم دے رکھا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان سٹینڈرڈ کوالٹی کنٹرول اتھارٹی ملوں کے خلاف کارروائی کرسکتی ہے۔پنجاب فوڈ اتھارٹی کوبناسپتی کی مانیٹرنگ کا اختیار حاصل نہیں ہے جس پرعدالت نے ریمارکس دیئے کہ کہ بناسپتی کمپنیاں قانون کی چھتری کے نیچے چھپنے کی بجائے اپنے گھی کے معیار کو بہتر بنائیں،عدالتیں کسی صورت ناقص گھی کی فروخت کی اجازت نہیں دے سکتیں۔عدالت نے گھی ملوں کی درخواست مسترد کرتے ہوئے قراردیا کہ درخواست گزار فوڈ اتھارٹی کے فیصلے کے خلاف متعلقہ فورم میں اپیل دائر کرسکتے ہیں۔دریں اثناءلاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس شمس محمود مرزا نے بناسپتی کمپنیوں کے مال اورآلات ضبط کرنے کے خلاف دائر ایک دوسری درخواست پر پنجاب فوڈاتھارٹی سے 16جون تک جواب طلب کرلیا ہے۔ اس کیس میں فیصل آباد گھی ملز سمیت 4 ملوں کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ پنجاب فوڈ اتھارٹی نوٹس دیئے بغیر کسی مل کو سیل کرسکتی ہے اور نہ ہی اسے مال ضبط کرنے کا اختیار حاصل ہے ،درخواستوں میں مزید کہا گیا ہے کہ اتھارٹی نے شوکاز نوٹس دینا بھی گوارا نہیں کیا، عدالت نے 16جون تک سماعت ملتوی کرتے ہوئے فوڈ اتھارٹی کو تفصیلی جواب داخل کرانے کی ہدایت کی ہے۔

مزید : لاہور