بیروزگاری کے خاتمہ کیلئے ٹیکنیکل ایجوکیشن کا فروغ ضروری ہے

بیروزگاری کے خاتمہ کیلئے ٹیکنیکل ایجوکیشن کا فروغ ضروری ہے

فیصل آباد ( بیورورپورٹ)پاکستان کی معاشی ترقی اور بے روزگاری کے خاتمہ کیلئے ٹیکنیکل ایجوکیشن کا فروغ ضروری ہے اور اس مقصد کیلئے مستحق طلبا و طالبات کو مختلف شعبوں میں تربیت دینے کے ساتھ ساتھ با عزت روزگار شروع کروانے کے کیلئے ان کی مالی امداد انتہائی مستحسن اقدام ہے۔ یہ بات فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے نائب صدر انجینئر احمد حسن نے سسٹین ایبل اکنامک ایمپاورمنٹ پروگرام کے تحت ووکیشنل ٹریننگ انسٹیٹیوٹس کے 57 طلبہ و طالبات میں 33 لاکھ روپے کے چیک تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ 18 سے 45 سال تک کی عمر کے نوجوان پاکستان کا قیمتی اثاثہ ہیں جن کو قومی ترقی کے دھارے میں شامل کرکے ملکی ترقی کی رفتار کو مزید تیز کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت بھیڑ چال کی وجہ سے زیادہ تر نوجوان ٹیکنیکل تعلیم کی بجائے روائتی تعلیم حاصل کر رہے ہیں اور یہ تعلیم حاصل کرنے کے باوجود انہیں نوکریاں نہیں مل رہیں۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے خاص طور پر مستحق طلبہ کو جاب مارکیٹ کی ضروریات کے مطابق مختلف ہنر سکھانے کا بندوبست کیا ہے ۔ انہوں نے سسٹین ایبل اکنامک ایمپاورمنٹ پروگرام کا بھی ذکر کیا جس کے تحت تربیت مکمل کرنے والے طلبہ کو اپنا کاروبار شروع کرنے کیلئے مالی امداد بھی مہیا کی جاتی ہے تا کہ وہ نوکریوں کے پیچھے بھاگنے کی بجائے نہ صرف خود اپنا کاروبارشروع کر سکیں بلکہ دوسروں کو بھی روزگار مہیا کر سکیں۔ انہوں نے دوسرے ترقی یافتہ ملکوں کا ذکر کیا اور کہا کہ جرمنی اور فرانس سمیت دیگر ملکوں نے ٹیکنیکل تربیت کے ذریعے ترقی کی منزلیں طے کی ہیں اس لئے ہمیں بھی اپنے نوجوانوں کو ٹیکنیکل تربیت دینا ہوگی۔

انہوں نے سیپ پروگرام کے تحت مالی امداد حاصل کرنے والوں پر زور دیا کہ وہ محنت اور ایمانداری سے کام کریں تا کہ اللہ تعالیٰ ان کی روزی میں برکت ڈالے۔ ضلعی زکوٰۃ کمیٹی کے چیئرمین نذیر حسین باجوہ نے کہا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی ویژن کے مطابق مڈل اور میٹرک پاس مستحق نوجوانوں کو مختلف ٹریڈز کی مفت تعلیم دی جا رہی ہے۔ ان ٹیکنیکل کورس کا دورانیہ چھ ماہ سے ایک سال تک ہے جبکہ پاس ہونے والے طلبہ کو اپنا کاروبار شروع کرنے کیلئے یکمشت بھاری مالی امداد بھی دی جا رہی ہے۔ انہوں نے سسٹین ایبل اکنامک ایمپاورمنٹ پروگرام اس وقت پنجاب کے 12 اضلاع میں جاری ہے جبکہ وزیر اعلیٰ اس کا دائرہ کار پورے پنجاب تک بڑھانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے مزید بتایا کہ اس پروگرام کیلئے مختص رقم میں بھی خاطر خواہ اضافہ کیا جا رہا ہے تا کہ اس سے زیادہ سے زیادہ مستحق لوگ مستفید ہو سکیں۔ ایریا منیجر ملک محمد رفیق نے بتایا کہ فیصل آباد کے 7 ووکیشنل ٹریننگ انسٹیٹیوٹس میں اس وقت 5 ہزار کے لگ بھگ طلبہ و طالبات زیر تعلیم ہیں جن میں سے پاس ہونے والے 57 طلبہ و طالبات کو اپنا کاروبار شروع کرنے کیلئے چیک تقسیم کئے جا رہے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ کمپیوٹر اپیلی کیشنز کا کورس کرنے والوں کو 70 ہزار روپے، ٹیکسٹائل فٹر کو 60 ہزار روپے ، ڈریس میکنگ ، ایمبرائیڈری اور انڈسٹریل سٹچنگ کورس کرنے والوں کو 50 ، 50 ہزار روپے جبکہ الیکٹریشن ، ریفریجریشن اینڈ ایئرکنڈیشننگ ، موٹر سائیکل مکینک ، آٹو مکینک اور بیوٹیشن کو اپنا کاروبار کرنے کیلئے 60/60 ہزار روپے ملیں گے۔

Back to Conversion T

مزید : کامرس