ایڈیشنل آئی جی پنجاب پولیس سمیت 3 سرکاری افسروں کو توہین عدالت کانوٹس

ایڈیشنل آئی جی پنجاب پولیس سمیت 3 سرکاری افسروں کو توہین عدالت کانوٹس

لاہور (نامہ نگار) لاہور ہائیکورٹ نے ایڈیشنل آئی جی پنجاب پولیس ، ڈپٹی ڈائریکٹر فوڈ لاہور اور ایس ڈی او لیسکو سلامت پورہ کو توہین عدالت کے نوٹس جاری کر دیئے۔تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ نے ایڈشنل آئی جی پنجاب پولیس محمد طاہر کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے ۔جسٹس عابد عزیز شیخ نے سابق انسپکٹر محمد صدیق کی درخواست پر سماعت کی ،درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ دوران سروس 2015 میں اس نے ایجوکیشن کے لئے پولیس سکالر شپ لیا تھا جبکہ ریٹائرمنٹ کے بعد اس کو رقم ریفنڈ کرنے کا نوٹس دے دیا گیا ،درخواست گزار کے وکیل نے نکتہ اٹھایاکہ عدالت نے 6فروری 2018ء کو درخواست دادرسی کے لئے ایڈیشنل آئی جی ویلفیئر پنجاب کو بھجوا دی تھی لیکن عدالتی حکم پر عمل نہیں کیا گیا۔دریں اثناء لاہور ہائیکورٹ نے ڈپٹی ڈائریکٹر فوڈ لاہور ملک محمد حسین کے خلاف بھی توہین عدالت کی درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا گیا ۔یہ درخواست ننکانہ صاحب کے عاشق علی کی طرف سے دائر کی گئی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عدالت کے حکم کے باوجود درخواست گزار کو ریگولرنہیں کیا جا رہا ،عدالت نے یہ حکم 17نومبر 2017ء کو جاری کیا تھاجس کی پاسداری نہیں کی جا رہی ،ڈپٹی ڈائریکٹر فوڈ کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائی جائے۔مزید برآں لاہور ہائیکورٹ نے ایس ڈی او لیسکو سلامت پورہ آفتاب رابرٹ کے خلاف بھی توہین عدالت کی درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے ۔عدالت نے یہ حکم کامران انجم کی درخواست پر جاری کیا ۔درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ عدالت کے حکم پر درخواست گزار کا بجلی میٹر تبدیل نہیں کیا جا رہا ،عدالت کے 23 اکتوبر 2017ء کے اس حکم پر تاحال عمل نہیں ہواجو توہین عدالت ہے ۔

توہین عدالت

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...