شنگھائی تعاون تنظیم کانئے چیلنجر ،خطرات سے نٹنے اور فروغ شراکت داری کے عزم کا اظہار

  شنگھائی تعاون تنظیم کانئے چیلنجر ،خطرات سے نٹنے اور فروغ شراکت داری کے عزم ...

بیجنگ(آئی این پی)شنگھائی تعاون تنظیم (ایس سی او) کے پاکستان اور چین سمیت سرحدی معاملات کے سربراہوں کاساتواں اجلاس گز شتہ روزتاشقند میں منعقد ہوا، ایس سی او کی کونسل برائے انسداد علاقائی دہشتگردی کی بارڈر سروسز اینڈ ایگزیکٹوکمیٹی کے ارکان نے اجلاس میں شرکت کی۔شرکاءنے ایس سی او ممالک کے درمیان سرحدی مسائل پر تبادلہ خیال کیا جس کی صدارت روس نے کی،اجلاس کے بعد جاری کردہ بیان کے مطابق شرکاءنے نئے چیلنجز (بقیہ نمبر46صفحہ12پر )

اور خطرات سے نمٹنے کیلئے بھی غور کیا،بیان میں کہا گیا اجلاس کے شرکاءنے سرحدوں سے متعلق مسائل پر معاون شراکت داری کو فروغ دینے کے عزم کا اظہار کیا، دریں اثناءچین کے صدر شی جن پھنگ کا کہنا تھا ان کا ملک ایس سی او کی سطح پر دہشتگردی کے مسائل پر قابو پانے کیلئے دوطرفہ تعاون کو مزید مضبوط بنائے گا ،روسی ذرائع ابلاغ کو ایک انٹرویو میںانہوں نے کہا ایس سی او تعاون چین اور دیگر رکن ممالک کے درمیان نئے طرز کے بین الاقوامی تعلقات اور اس قسم کی کوششوں کے اچھے پلیٹ فارم کی ایک کامیاب مثال ہے۔ایس سی او کے قیام کے 18برسوں کے دوران انہوں نے قریبی تعاون اور رابطے کو برقرار رکھا جس کے نتیجے میں تنظیم آگے بڑھی اور اس نے خطے میں امن ،استحکام ، ترقی اورخوشحالی میں اہم کردار ادا کیا ہے، چین اور امریکہ شنگھائی جذبہ کے تحت تنظیم کے رکن ممالک کی سلامتی اور ترقی کے مفادات میں آگے بڑھ رہے ہیں اور وہ چین روس اور دیگر رکن ممالک کےساتھ مل کر اتحاد، باہمی اعتماد اور مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ دیں گے تاکہ ہماری تنظیم دنیا کو مزید استحکام اور مثبت توانائی فراہم کرنے کیلئے ترقی کرے اور یہ انسا نیت کے مستقبل کو مساوی برادری بنانے میں منفرد کردار ادا کرتی رہے۔

شنگھائی تعاون تنظیم

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...