کینسر کاطالبعلم پر حملہ ‘ والدین کا علاج پر سب  کچھ قربان ‘ ٹریٹمنٹ کیلئے ڈاکٹرز کی 20 لاکھ ڈیمانڈ

کینسر کاطالبعلم پر حملہ ‘ والدین کا علاج پر سب  کچھ قربان ‘ ٹریٹمنٹ کیلئے ...

چوک مکول (نامہ نگار)چوک مکول کے نواحی علاقہ موضع بیٹ قائم شاہ کے رہاشی (بقیہ نمبر26صفحہ12پر )

غلام یاسین چانڈیہ کا ششم کلاس کا طالب علم بارہ سالہ لڑکا محمد اویس عرصہ دو سال سے کینسر میں مبتلا ھے ‘ بچے کو مختلف پرائیویٹ ہسپتالوں میں لے گیا مگر علاج نہ ھوسکا دو سال سے کینسر جیسی موذی مرض میں مبتلا بچے کا علاج کرانے کے لیے گھر کا سب کچھ موجود سامان جمع پونجی فروخت ہوگئی ‘والد غلام یاسین چانڈیہ دو سال سے کینسر میں مبتلا بچے کے علاج کی خاطر نجی بنک سے قرضہ حاصل کیا پرائیوٹ ہسپتالوں سے ٹیسٹ کرا کرا کر علاج کرانے بچہ پھر بھی صحت یاب نہ ھوسکا  کینسر میں مبتلا طالب علم محمد اویس کے والد کا کہنا ھے کہ ڈاکٹرروں نے کہا کہ پچیس لاکھ روپے میں کینسر میں مبتلا بچے کا علاج ھوسکتا ھے گھر میں صرف ایک موٹرسائیکل ھے سارا دن کراے پہ چلا کر اپنے بیوی اور چھوٹے چھوٹے بچوں کا پیٹ پالتا ھوں اتنی بڑی رقم سے کینسر میں مبتلا بچے کا علاج کیسے کرا سکتا ھوں‘وزیراعظم عمران خان شوکت خانم ہسپتال میں کینسر میں مبتلا بچے کا علاج کرایں۔چوک مکول کے نواحی علاقہ موضع بیٹ قائم شاہ کے رہائشی غلام یسین چانڈیہ نے صحافیوں کو بتایا کہ میرا بیٹا محمد ادریس پانچ سال سے زائد ایک ٹانگ میں کینسر کے مرض میں مبتلا ہے اور چلنے پھرنے سے قاصر ہے غلام یسین نے مزید بتایا کہ میں انتہائی غریب ہوں اور میرے آٹھ بچے ہیں جبکہ میں موٹرسائیکل کرائے پر چلاتا ہوں جس سے گھر کے اخراجات اور بیٹے کے علاج معالجے کیلئے بمشکل پیسے اکٹھے کرتا ہوں جس پر محمد ادریس کی والدہ کا کہنا تھا کہ میرا بچہ چھٹی کلاس کا طالبعلم ہے اگر یہ تندرست ہوتا تو آج یہ مزید کلاسیں پاس کر چکا ہوتا اور بیٹے کے علاج پر ھم گھر کی تمام جمع پونجی لگا چکے ہیں محمد ادریس کی والدہ نے مزید بتایا کہ بیٹے کے علاج اور آپریشن کیلئے ڈاکٹروں نے 20 لاکھ کے بندو بست کا کہا ہے جبکہ ھم نے تمام جمع پونچھی علاج و معالجہ کی مد میں لگا کر پہلے ہی مقروض ہیں انہوں نے کہا کہ مزید علاج معالجہ نہ ہونے کی وجہ سے بیٹے کی دوسری ٹانگ کا بھی خطرہ ہے۔ والدین نے مزید بتایا کہ ھم لاہور کے ڈاکٹروں نے علاج اور آپریشن کیلئے 20 لاکھ روپے کے اخراجات جو بتائے ہیں وہ ہماری استطاعت سے باہر ہیں انہوں نے کہا کہ فلاحی تنظیموں اور مخیر حضرات سے علاج کیلئے مالی تعاون کریں۔

کینسر مریض

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...