جندول،لوئر دیر میں سیاحوں اور مقامی افراد کے نقل وحرکت پر پابندی ختم

جندول،لوئر دیر میں سیاحوں اور مقامی افراد کے نقل وحرکت پر پابندی ختم

جندول(نمائندہ پاکستان)جندول لوئر دیر کے دورافتہ علاقہ پاک افغان بارڈر علاقہ بنشاہی شلخو کس کو سیاحوں اور مقامی لوگوں کے نقل حرکت پر پابندی ختم کردی گئی ہے عید کے پہلے دوسرے اور تیسر دنوں میں ملک بھر کے مختلف اضلاع سے ساٹھ ہزار سے زیادہ سیاحوں نے پاک افغان بارڈر کا شاہی بنشاہی کی سیرکرائی۔تفصلات کے مطابق گزشتہ کئی سالوں سے بنشاہی شلخوکس،اور دیگر سیاحی مقامات پر دہشتگردی خودشاد کے وجہ سے سیاحوں سمیت مقامی لوگوں کے نقل حرکت پر پابندی عائد کردے گئی تھے۔تااہم گزشتہ روز کمانڈنٹ دیر ٹاسک فورس کرنل شہزاد اعامر اور 183 ونگ کے لفٹیننٹ کرنل شاہد آمان کے خصوصی ہدایات پربنشاہی سمیت دیگر خوبصورت علاقوں پر سیاحوں اور مقامی لوگوں کے نقل حرکت پر پابندی آٹھا دے گئی ہے انہونے گزشتہ روز رمضان میں شاہی بنشاہی کے مقامی مشران کے ایک علی سطح جرگے کے دوران کہا کہ سیاحتی مقامات ملک کا سرمایا ہے اور ہمارا کوشش ہونگے کہ جہاں جہاں سیاحتی مقامات موجود ہے ان کے لئے موثر اقدامات کیا جائے گا تااہم گزشتہ روز انہونے شاہی بنشاہی کے تمام خوبصورت مقامات کو سیاحوں اور مقامی لوگوں کھلا اجازت دے دیا جس کے بعد ملک کے تمام اضلاع سے سیاحوں کے جلوسے شروع ہوگئی تھے۔جس کے لیے عید کے دنوں 183 ونگ کے تمام نوجوان نے سخت سیکورٹی اقدامات سمیت سیاحوں کے حوصلہ افزائی اور معلومات کے لئے جگہ جگہ سپاہی کھڑا کردیا تھا اس وجہ سے سیاحوں کو کوئی تکلف نہیں تھا اوربے خوف وخطر پاک افغان کے اخری بارڈر تک با اسانی سے جاسکتا تھا۔پاک فوج کے اس اقدام پر قوم مشوانی قبیلے کے مقامی مشران ناظم وحید اللہ مشوانی،ملک فردول خان،کونسلرملک سفر خان،ملک نصرولدین، کونسلرملک اجبر خان،سمیت دیگر علاقے کے ہزاروں لوگوں نے پاک فوج 183 ونگ کے کرنل شاہد امان،سمیت دیگر تمام افسران کا شکریہ ادا کردیا تھا

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...