پاکستان کی بات چیت کی پیشکش پر بھارت نے بھی اپنا فیصلہ سنا دیا

پاکستان کی بات چیت کی پیشکش پر بھارت نے بھی اپنا فیصلہ سنا دیا
پاکستان کی بات چیت کی پیشکش پر بھارت نے بھی اپنا فیصلہ سنا دیا

  


کراچی (جنگ نیوز) بھارت نے بات چیت کی پاکستان کی پیشکش مسترد کردی ہے اور بھارتی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ اگر پاکستان تعلقات بہتر بنانے میں سنجیدہ ہے تو بھارت مخالف عناصر کیخلاف کارروائی کرے ۔

تفصیلات کےمطابق بھارت نے پاکستان سے ان قوتوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کردیا جو بھارت مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہیں ۔ بھارت نے پاکستان سے مطالبہ کیا کہ خالصتان عناصر کے خلاف کارروائی کی جائے اور کرتار پور کوریڈور سے متعلقہ کمیٹی میں مخصوص متنازع عناصر کو شامل کرنے سمیت کلیدی مسائل پر وضاحت پیش کی جائے ۔ دوسری طرف بھارتی میڈیا نے وائٹ ہاؤس حکام کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ پاک بھارت امن کی ذمہ داری پاکستان پر ہے۔ عمران خان کی طرف سے مودی کو لکھے گئے خط پر وائٹ ہاؤس نے پاکستان پر واضح کیا کہ جنوبی ایشیا میں پائیدار امن کا انحصار دہشت گروپوں کے خلاف کارروائی ہے۔

بھارتی اخبار کے مطابق پاکستان کی طرف سے بات چیت کی پیش کش کو بھارت نے مسترد کردیا ہے اور کہا ہے دہشت گردی اور بات چیت اکھٹے نہیں چل سکتے اور بشکک میں دونوںوزراعظم کی کوئی بات چیت طے نہیں۔رپورٹ کے مطابق امریکی وزارت خارجہ کے اعلیٰ حکام کا کہنا ہے پلوامہ حملے کے تناظر میں امریکا نے دیکھا کہ پاکستان نے دہشت گرد گروپوں کے خلاف کارروائیاں کیں اور امریکاپاکستان کے ان اقدامات کو سراہتا ہے، انہوں نے کہا ہم نے ہمیشہ اتفاق کیا ہے کہ پاک بھارت تناؤ کے اسباب کوسلجھانے کی ضرورت ہے۔بھارتی اخبار کے مطابق آپریشن بلواسٹار کی برسی کے موقع پر پاکستان کے ایواکیو ٹرسٹ پراپرٹی بورڈ کے رکن گوپال سنگھ چاولہ کی طرف سے بھارت مخالف نعرے بلند کرنے پر ردعمل دیتے ہوئے وزارت خارجہ کے ترجمان رویش کمار کا کہنا تھا کہ ہمارا موقف بہت واضح ہے جس کا پہلے اعادہ کرچکے ہیں کہ پاکستان بھارت مخالف سرگرمیوں میں ملوث عناصرکے خلاف کارروائی کرے۔ ہم توقع کرتے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں اور یہ بین الاقوامی معیاروں کے مطابق ہے ۔

انہوں نے کہا کہ بھارت توقع کرتا ہے کہ اگر پاکستان بھارت کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کی کوششوں میں سنجیدہ ہے تو یہ لازمی ہے کہ پاکستان بھارت مخالف عناصر کے خلاف کارروائی کرے۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ بھارت کے کچھ کلیدی مسائل پر پاکستان وضاحت پیش کرنے میں ناکام رہا ہے۔ ہم نے اپنے خدشات کا تبادلہ کیا ،انہوں نے کہا کہ بھارت نے کچھ ایشوز پر پاکستان سے وضاحت مانگی جنہیں چودہ مارچ کو اٹاری کے مقام پرٹیکنیکل اجلاس میں پیش کیے تھے ،تاہم پاکستان کی طرف سے جواب کا ابھی بھی انتظار ہے۔

مزید : بین الاقوامی