لاک ڈائون کرنے والے ممالک میں کتنی اموات ہونے سے بچ گئیں؟ تازہ تحقیق جان کر پاکستانی حکومت شدید شرمندہ ہوجائے

لاک ڈائون کرنے والے ممالک میں کتنی اموات ہونے سے بچ گئیں؟ تازہ تحقیق جان کر ...
لاک ڈائون کرنے والے ممالک میں کتنی اموات ہونے سے بچ گئیں؟ تازہ تحقیق جان کر پاکستانی حکومت شدید شرمندہ ہوجائے

  

لندن(ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا بھرمیں قاتل کورونا وائرس کی وجہ سے لاکھوں افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں جبکہ لاکھوں ہی ہسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔ ہلاکتوں اور متاثرین کی تعداد کو روکنے کے لیے دنیا کے متعدد ممالک نے لاک ڈاون اور کرفیو جیسے سخت اقدامات کیے جو بڑے پیمانے پر جانی نقصان سے بچا گئے۔

الجزیرہ نے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ امپیریل کالج لندن کے ماہرین نے یورپ میں لاک ڈاون کے اثرات کا جائزہ لیا ہے تو وہ اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ یورپ میں لاک ڈاون کی وجہ سے تیس لاکھ سے زائد افراد کی جانیں بچی ہیں۔

ڈان نیوز نےغیر ملکی خبر رساں ایجنسی 'رائٹرز' کے حوالے سے بتایا ہے کہ امپیریل کالج لندن کے سائنسدانوں نے 11 ممالک میں لاک ڈاؤن کے اثرات کے لیے کیے گئے ماڈلنگ مطالعے میں کہا کہ مارچ میں اٹھائے گئے بیشتر سخت اقدامات کافی پراثر رہے اور ان سے وائرس کے پھیلاؤ کی شرح ایک سے کم کرنے میں مدد ملی۔

محقیقین کا خیال تھا کہ جرمنی، فرانس، برطانیہ،اسپین، ناروے، اٹلی،سویڈن، آسٹریا،بیلجیئم ،سویڈن اور سوئٹزرلینڈ میں اس وائرس س ایک کروڑ بیس لاکھ سے ایک کروڑ 50لاکھ تک افراد متاثر ہوں گے ۔ محققین نے  وبا سے اموات کے جو امکانات ظاہر کیے تھے، اگر اس کا موازنہ یورپ میں ہونے  والی اموات کی تعداد سے کیا جائے تو وائرس سے تقریباً 31 لاکھ کم اموات واقع ہوئی ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -