پنجاب ہائی وے ڈیپارٹمنٹ، 8ارب 35کروڑ سے زائد کی بے ضابطگیوں کا انکشاف 

  پنجاب ہائی وے ڈیپارٹمنٹ، 8ارب 35کروڑ سے زائد کی بے ضابطگیوں کا انکشاف 

  

لاہور(ارشدمحمود گھمن)چیف انجینئر پنجاب ہائی وے ایم اینڈ آر ڈیپارٹمنٹ میں 8ارب 35کروڑ 85لاکھ روپے کی بے ضابطگیوں کا انکشاف ہواہے،اس کرپشن میں مبینہ طورپر 24 افسر ان ملوث ہیں جن میں 5ایس ای اور 19 ایگزیکٹو انجینئراورٹھیکیداربھی شامل ہیں، سیکرٹری سی اینڈ ڈبلیو کیپٹن (ر)اسد کا کہنا ہے کہ قومی خزانہ کو نقصان پہنچانے والے تمام افسروں کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔ذرائع کے مطابق چیف انجینئرخاور زمان کو محکمہ میں ایک حکومتی وزیرکی آشیر بادحاصل ہے۔ باثوق ذرائع سے معلوم ہواہے کہ حکومت پنجاب نے چیف انجینئر خاور زمان کو سٹرکوں کی مینٹیننس کی مد میں اربوں روپے کے فنڈز فراہم کئے، چیف انجینئر خاورزمان نے ماتحت ایس ای ایم اینڈ آر سرکل راولپنڈی شوکت محمود، ایس ای ہائی وے ایم اینڈ آرسرکل لاہور شیخ اعجاز، ایس ای ہائی وے ایم اینڈ آر سرکل گوجرنوالہ ممتاز احمد کلاسرا،ایس ای ہائی وے ایم اینڈ آر سرکل ملتان سعید اللہ ہاشمی اورایس ای مکینیکل سرکل لاہور نور اقبال جبکہ ایگزیکٹو انجینئرز کاشف شکور، ایس نذیر، خالد شہزاد، انجم خان،زاہد ارشد، شبیر احمد، محمد علی صدقانی، اعجاز احمد،رانااقبال اشرف،محمد سرمد اختر،فریدانور، محمد سلیم،شاہد ریاض،سلیم شاہد ،محمدعثمان اورشہزاد سمیع وغیرہ سمیت ٹھیکیداروں کی مبینہ ملی بھگت سے سڑکوں کی مرمت کے لئے ناقص میٹریل جس میں پتھر،لک اور بجری شامل ہے کااستعمال کرتے ہوئے 8ارب 35کروڑ85لاکھ روپے کی مبینہ طور پر بوگس ادائیگیاں کرکے قومی خزانہ کے اربوں روپے کی آپس میں بندر بانٹ کرلی،واضح رہے کہ گزشتہ روزسیکرٹری سی اینڈ ڈبلیو کیپٹن (ر) اسد نے ایک شہری کی درخواست پرایم اینڈآر ہائی وے فیصل آباد کے ایگزیکٹو انجینئر وقاص اورمحمود کے علاوہ اکاؤنٹس کلرک اورہیڈ کلرک کو ایک کروڑ روپے کی کرپشن ثابت ہونے پر معطل کرتے ہوئے متعلقہ ٹھیکیدارکوبلیک لسٹ کرنے اورمذکورہ افسروں کیخلاف چیف انجینئر سے چارج شیٹ رپورٹ طلب کرلی ہے جبکہ اسی طرح ایگزیکٹو انجینئر سیالکوٹ دلشاداحمد کے خلاف 40کروڑ روپے کی بوگس ادائیگیاں کرنے پربھی انکوائری کرنے کے احکامات جاری کئے ہیں تاہم اس حوالے سے سیکرٹری سی اینڈ ڈبلیو کیپٹن (ر)اسد کا کہنا ہے کہ قومی خزانہ کو نقصان پہنچانے والے تمام افسروں کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔

بے ضابطگیوں کا انکشاف 

مزید :

صفحہ آخر -