صادق کالج ویمن یونیورسٹی میں خوراک  کو محفوظ بنانے کے حوالے سے ویبینار

 صادق کالج ویمن یونیورسٹی میں خوراک  کو محفوظ بنانے کے حوالے سے ویبینار

  

 بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)وائس چانسلر گورنمنٹ صادق کالج ویمن یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر صاعقہ امتیاز آصف کی زیر (بقیہ نمبر8صفحہ6پر)

صدارت یونیورسٹی کے شعبہ کیمسٹری و ڈائریکٹوریٹ آف اسٹوڈنٹس افیئرز کی جانب سے عالمی یوم تحفظ خوراک کی مناسبت سے خوراک کو محفوظ بنانے کے عنوان سے ویبنار کا انعقاد کیاگیا۔ جس میں وائس چانسلر چولستان یونیورسٹی آف ویٹرنری اینڈ اینیمل سائنسز پروفیسر ڈاکٹر محمد سجاد خان نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔ اس موقع پر انہوں نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان زراعت کے ساتھ منرلز اور دودھ پیدا کرنے والا خود کفیل ملک ہے جہاں دودھ کی پیداوار61 % پر کیپیٹا ہے مگر عام آدمی کودرست آگاہی نہ ہونے سے ہم دودھ کی وافر مقدار کو درست طریقے سے محفوظ نہیں بناسکے۔بازاروں میں بکنے والادودھ دو طرح کا ہوتا ہے ایک ناقص دودھ جبکہ دوسرا اچھی کوالٹی کا دودھ ہے تو اس لئے ہمیں بہترین کوالٹی والا دودھ دیکھ کرخریدنا چاہیے۔جنوبی پنجاب ایسا خطہ ہے جو دودھ اور گوشت کی پیداوار کیلئے مناسب ہے۔پاکستان وہ ملک ہے جس میں پالے جانے والے حلال جانور دنیا کے بے شمار ممالک کو فروخت ہوتے ہیں اوراس خطہ کے اونٹ فرانس بھیجے گئے جہاں پر اونٹ کے دودھ سے اعلیٰ قسم کی چاکلیٹ کریم بنائی جارہی ہے جو مہنگے بھاؤ فروخت ہوتی ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اس وقت ہم یونیورسٹی سطح پر بکری کے دودھ سے پنیر اور آئس کریم پر کام کر رہے ہیں۔پروفیسر ڈاکٹر صاعقہ امتیاز آصف وائس چانسلرگورنمنٹ صادق کالج ویمن یونیورسٹی نے شرکاء ویبیناراور مہمان خصوصی کا شکریہ کا ادا کرتے ہوئے کہا کہ اللہ پاک کا لاکھ شکر ہے کہ اس نے ہمیں اپنی بے شمار نعمتوں سے نوازا ہے۔ قرآن کریم میں صحت کے عین مطابق اچھی خوراک استعمال کرنے کی رہنمائی ملتی ہے۔ جو لوگ ہمارے لئے بلاناغہ سات یوم اچھی اور معیاری خوراک مہیا کرتے ہیں ہمیں ایسے لوگوں کا خیال رکھنا چاہیے اور ملکی سطح پر حفظان صحت کے اصولوں کے عین تیار ہونے والی خوراک کو استعمال کرنا چاہیے جوکہ ملکی مفاد میں بہتر ہے۔ ڈاکٹر عقیلہ شاہین لیکچرر شعبہ کیمسٹری دی گورنمنٹ صادق کالج ویمن یونیورسٹی نے خوراک کو محفوظ بنانے اور کوالٹی کو بہتر کرنے کے حوالے سے توسیع لیکچر دیا۔ ویبینار میں یونیورسٹی کی ٹیچرز، محققین اور طالبات کی ایک کثیر تعداد نے شرکت کی۔

ویمن یونیورسٹی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -