وفاقی کابینہ، بھارت سے کاروبار، پاکستان انگلینڈ میچز کیلئے پی ٹی وی کو استثنا دینے کی تجاویز مسترد

  وفاقی کابینہ، بھارت سے کاروبار، پاکستان انگلینڈ میچز کیلئے پی ٹی وی کو ...

  

 اسلام آباد(نیوزایجنسیاں)وفاقی کابینہ نے طارق ملک کو چیئرمین نادرا، مبشر حسن کو ایم ڈی اے پی پی،عمر حبیب لودھی کو ایم ڈی یوٹیلیٹی سٹورز کارپوریشن،عامر محی الدین کو سی ای او پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی فاؤنڈیشن تعینات کرنے کی منظوری دیدی جبکہ تاجکستان کو کرونا وباء کا مقابلہ کرنے کیلئے انسانی بنیادوں پر امداد فراہم کرنے اور پی ٹی وی کی جانب سے سونی پکچرز نیٹ ورک کو واجب الادا رقوم ادا کرنے کی منظوری دی۔کابینہ نے پاکستان انگلینڈ میچز کے حوالے سے پی ٹی وی کو استثنیٰ دینے کی تجویز کو مسترد کر دیا۔کابینہ نے قومی ترانے کو جدید طرز پر ڈھالنے کیلئے کمیٹی کے قیام کی بھی منظوری دی۔میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستان انگلینڈ کرکٹ سیریز کو پاکستان میں دیکھا نہیں جا سکے گا۔ کابینہ نے پی ٹی وی  کو پاکستان اور انگلینڈ کی کرکٹ سیریز دیکھانے کیلئے انڈین کمپنی کی خدمات لینے کی اجازت نہیں دی، وزیراعظم نے کہا کہ جب تک ہندوستان مقبوضہ کشمیر پر 5اگست کے فیصلہ کو واپس نہیں لیتا تب تک بھارت  کے ساتھ کسی بھی قسم کا کاروبار نہیں ہو سکتا، انتخابی اصلاحات پر اپوزیشن کی تجاویز کا انتظار ہے، 500 الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں کا آرڈر دینے جا رہے ہیں،مسلم ممالک کو انتہا پسندی کا طعنہ دینے والے اپنے اندر جھانکیں، مغربی ممالک میں اسلامو فوبیا سرایت کر گیا، مغرب میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا کا تدارک کیا جائے۔ منگل کووزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا،اجلاس کے آغاز میں گھوٹکی ٹرین حادثے کے شہدا  اور کینیڈا میں جاں بحق ہونے والے پاکستانیوں کیلئے دعا کی گئی۔ وززیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، وزیر اطلاعات اور مشیر پارلیمانی امور نے الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں  اور بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو حق رائے دہی کا اختیار دینے کے حوالے سے اب تک کی پیش رفت سے وزیر اعظم کو بریفنگ دی۔   چیئرمین کابینہ کمیٹی برائے ٹرانسپورٹ اینڈ لاجسٹکس کی جانب سے کابینہ کو  ابتدائی رپورٹ پیش کی گئی۔  وزیر قانون نے کریمنل لا ریفارمز (فوجداری قوانین اصلاحات) کے حوالے سے پیش رفت پر وزیراعظم کو آگاہ کیا۔ وزیر اعظم نے  فوجداری قوانین میں اصلاحات کے حوالے سے  وزیرِ قانون اور انکی ٹیم کی کاوشوں کو سراہا۔ کابینہ نے اسٹیٹ لائف انشورنس کارپوریشن کا اداشدہ سرمایہ (Paid-up Capital)اورشئیر کیپیٹل (Authorized Share Capital)  میں اضافے کی تجویز منظور کی۔ کابینہ نے فرسٹ وویمن بنک کے  بورڈ آف ڈائریکٹر ز کے انڈیپنڈنٹ ڈائریکٹرز اور چئیرمین کی تعیناتی  کی منظوری دی۔ (ان میں نجیب آگرہ والا (چئیرمین)، بشریٰ احسان، صبیحہ سلطان، اکبرعلی، وجاہت رسول خان اور نغمانہ عالمگیر ہاشمی شامل ہیں)۔ کارلٹن ہوٹل کراچی کی اراضی کو اپارٹمنٹس کی تعمیر کے لئے برؤے کار لانے  اور پاکستان کوارٹرز اور جمشید کوارٹرز کراچی کی ریجنریشن پلان کی منظوری  کا ایجنڈا موخر کر دیا گیا۔ کابینہ نے عامر محی الدین (بی ایس 20، سیکرٹیریٹ گروپ)کو چیف ایگزیکیٹو آفیسر  پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی فاؤنڈیشن تعینات کرنے کی منظوری دی۔  کابینہ نے اسلام آباد کیپیٹل ٹیریٹری لوکل گورنمنٹ کے لئے رولز کابینہ کمیٹی برائے قانون سازی کو بھجوا دیے۔ کابینہ نے جسٹس (ر) ضیاء پرویز کو کمیشن آف انکوائری برائے لاپتہ افراد (Commission of Enquiry on Enforced Disappearances)  میں بطور ممبر تعینات کرنے کی منظوری دی۔   پاکستان کوسٹ گارڈ فاؤنڈیشن کے قیام کا ایجنڈا موخر کر دیا گیا۔ کابینہ نے عمر حبیب لودھی کو منیجنگ ڈائریکٹر یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن آف پاکستان تعینات کرنے کی منظوری دی۔ کابینہ کو بتایا گیا کہ یوٹیلیٹی اسٹور کارپوریشن کوماضی میں مالی خسارے کا سامنا رہا تھا۔  موجود حکومت کی کوششوں کے نتیجے میں یوٹیلیٹی اسٹورز کی سیل دس ارب سے بڑھ کر سو ارب تک چلی گئی ہے اور ادارہ آپریٹنگ پرافٹ میں یعنی منافع کما رہا ہے۔ کابینہ نے قومی ترانے کو جدید طرز پر ڈھالنے کے لئے (انیلاگ سے  ڈولبی ایٹمز ٹیکنالوجی سے ڈیجیٹل کرنے) کمیٹی کے قیام کی منظوری دی۔کابینہ نے وزارتِ اطلاعات کی جانب سے پیش کی جانے والی اس تجویز کو بھی منظور کیا کہ پی ٹی وی سپورٹس پر سیریز اے چیمپیئن شپ 2018-19اور پاکستان بمقابلہ بنگلا دیش 2020کرکٹ میچز دکھانے کے ضمن میں پی ٹی وی کی جانب سے سونی پکچرز نیٹ ورک کو واجب الادا رقوم کی ادائیگیاں کر دی جائیں تاہم کابینہ نے پاکستان انگلینڈ میچز کے حوالے سے پی ٹی وی کو استشنیٰ دینے کی تجویز کو مسترد کر دیا۔   کابینہ نے مبشر حسن (انفارمیشن گروپ آفیسر) کو منیجنگ ڈائریکٹر اے پی پی تعینات کرنے کی منظوری دی۔ کابینہ نے تاجکستان کو کرونا وباء کا مقابلہ کرنے کے لئے انسانی بنیادوں پر امداد  فراہم کرنے کی منظوری دی۔اس سامان میں پی پی ای کٹس وغیرہ شامل ہوں گی۔کابینہ نے نوید اسمعیل کو کے الیکٹرک بورڈ آف ڈائریکٹرز میں بطور ممبر تعینات کرنے کی منظوری دی۔ کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے 21مئی2021،26 مئی 2021اور 02جون 2021میں لیے گئے فیصلوں  پر غور کیا اور انکی توثیق کی۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی کے فیصلوں کی توثیق کے دوران معاون خصوصی برائے سماجی تحفظ ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے کورونا وباء کے دوران ایک کروڑ ستر لاکھ مستحق خاندانوں میں نہایت شفاف طریقے سے رقوم کی تقسیم پر بریفنگ دی۔ اور احساس کیش پروگرام کی دوسری قسط کے بارے میں بریفنگ دی۔ کابینہ کو بتایا گیا کہ کورونا سے متاثرہ افراد کو معاونت فراہم کرنے کے ضمن میں پاکستان کی جانب سے شروع کیے جانے والا پروگرام دنیا کا تیسرا بڑا پروگرام ہے۔ پہلے نمبر پر جاپان، دوسرے پر امریکہ اور تیسرے نمبر پر پاکستان کا احساس ایمرجنسی کیش پروگرام ہے۔  کابینہ کو بتایا گیا کہ نیٹ ہائیڈل پرافٹس کا معاملہ جو کہ ایک طویل عرصے سے حل طلب تھا اس کے حوالے سے معاملات طے پا گئے ہیں اور آئندہ چھ ماہ میں نیٹ ہائیڈل پرافٹس کی ادائیگیاں کر دی جائیں گی۔   کابینہ کمیٹی برائے نجکاری کے 21مئی 2021کے اجلاس میں لئے گئے فیصلوں کی توثیق کی گئی۔  کابینہ کمیٹی برائے قانون سازی کے 02جون2021کے اجلاس میں لئے گئے فیصلوں کی بھی توثیق کی گئی۔  کابینہ نے ٹیلیفون انڈسٹریز آف پاکستان کو نیشنل ریڈیو ٹیلی کمیونیکیشن کارپوریشن ٹرانسفر کرنے کی منظوری دی۔ اس حوالے سے پیش آنے والے معاملات کے حل کے لئے بین الوزارتی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔کابینہ نے طارق ملک کو چئیرمین نادرا تعینات کرنے کی منظوری دی۔ طارق ملک اس سے پہلے بھی نادرا کے چئیرمین رہ چکے ہیں۔کابینہ اجلاس  کے بعد  میڈیا  کوبریفنگ دیتے ہوئے  وفاقی وزیر اطلاعات چوہدری فواد حسین نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے وفاقی کابینہ اجلاس میں پاکستانی نژاد کینیڈین خاندان کے افراد کے بہیمانہ طریقے سے قتل کی شدید مذمت کی، وزیراعظم نے اہلخانہ کو ہر ممکن مدد اور تعاون کی یقین دہانی کرائی اور اس واقعہ کے حوالے سے وزارت خارجہ سے مکمل رپورٹ طلب کی ہے۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ جو ممالک مسلمان ممالک کو انتہاء پسندی کا طعنہ دیتے تھے وہ اپنے اندر جھانکیں، وزیراعظم عمران خان اسلاموفوبیا پر دنیا کی توجہ دلا چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی اصلاحات کے معاملے پر اپوزیشن کی تجاویز کا انتظار ہے، سمندر پار پاکستانیوں کو ووٹ کا حق نہ دینے کی مسلم لیگ نون کے موقف کی مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اوورسیز پاکستانیوں کی ترسیلات زر کی وجہ سے ملک معاشی طور پر مستحکم ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پریس کلبز اور بار کونسلز کے انتخابات کیلئے الیکٹرانک ووٹنگ کی سہولت فراہم کریں گے۔ وفاقی کابینہ  اجلاس میں وزیر قانون نے فوجداری قوانین میں اصلاحات کے حوالے سے وزیراعظم کو بریفنگ دی گئی جبکہ احساس پروگرام پر بھی بحث کی گئی، احساس پروگرام کے تحت ایک کروڑ 70لاکھ افراد مستفید ہو رہے ہیں جبکہ پروگرام  کو مزید موثر بنانے کیلئے مزید اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی کوششوں سے یوٹیلیٹی سٹورز کارپوریشن خسارے سے باہر آ گیا ہے، یوٹیلیٹی سٹورز ہمیں خسارے میں ملاتھا، اس کی آمدن میں بہت بہتری آ چکی ہے۔ فواد چوہدری نے کہا کہ طارق ملک کو نادرا کا چیئرمین تعینات کی منظوری دے دی گئی ہے جبکہ وفاقی کابینہ نے قومی ترانے کی  ای ریکارڈنگ کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ فواد چوہدری نے کہا کہ پاکستانی اڈے امریکہ کو دینے کے حوالے سے خبروں میں کوئی حقیقت نہیں ہے، تمام پاکستان کے پاس ہیں، وزیرخارجہ اس حوالے سے سینیٹ میں واضح طور پر بیان دے چکے ہیں۔ فواد چوہدری نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے پی ٹی وی کی درخواست جس میں استدعا کی گئی تھی کہ پاکستان اور انگلینڈ کی کرکٹ سیریز دیکھانے کیلئے انڈین کمپنی کی خدمات لینے کی اجازت مانگی تھی، کابینہ نے پی ٹی وی کی درخواست کو مسترد کیا اور وزیراعظم نے کہا کہ جب تک ہندوستان مقبوضہ کشمیر پر 5اگست کے فیصلہ کو واپس نہیں لیتا تب تک ہندوستان کے ساتھ کسی بھی قسم کا کاروبار نہیں ہو سکتا ہے۔ فواد چوہدری نے کہا کہ پاکستان انگلینڈ کرکٹ سیریز کو پاکستان میں دیکھا نہیں جا سکے گا جبکہ اس حوالے سے گفتگو جاری ہے اور ایشیئن کرکٹ کونسل سمیت آئی سی سی سے بھی بات ہو رہی ہے، ساؤتھ ایشیاء میں ہندوستان کے پاس رائٹس ہیں۔ فواد چوہدری نے کہا کہ پیپلز پارٹی اب صرف سندھی قوم پرست جماعت بن گئی ہے، پنجاب کے حوالے سے بلاول زرداری اور وزیراعلیٰ کے بیانات سے ان کی سیاسی نظریہ کا پتہ چلایا جا سکتا ہے۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا ہے کہ مہنگائی اور معیشت کی تباہی کا اپوزیشن کا بیانیہ اپنی موت آپ مر چکا ہے۔ ٹوئٹر پر فواد چودھری نے اپنے پیغام میں کہا کہ اب اپوزیشن کے اندرونی اختلافات اور لیڈرشپ کی لڑائی ان کی رہی سہی سیاست کو فارغ کر دے گی، اپوزیشن کی سنجیدہ پارلیمانی لیڈرشپ انتخابی اصلاحات پر بات کرنا چاہتی ہے لیکن غیر سنجیدہ قیادت راستے میں رکاوٹ ہے۔

وفاقی کابینہ 

مزید :

صفحہ اول -