سابق جج اسلام آباد ہائیکورٹ شوکت صدیقی کا سپریم کورٹ میں جواب 

 سابق جج اسلام آباد ہائیکورٹ شوکت صدیقی کا سپریم کورٹ میں جواب 

  

  اسلام آ باد (سٹاف رپورٹر) اسلام آباد ہائی کورٹ کے سابق جج  شوکت عزیز صدیقی نے کہا ہے کہ 2 سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور آصف سعید کھوسہ مجھے نکالنا چاہتے تھے، بدقسمتی سے میں دسمبر 2015 سے پریشر میں ہوں،جذباتی انداز میں بولے میرے فوج میں کسی سے کوئی تعلقات نہیں ہیں، ہر طرح کے خطرات کے باوجود میں اپنے خاندان کے ساتھ اسلام آباد میں مقیم ہوں۔ منگل کو سپریم کورٹ میں شوکت عزیز صدیقی کیس کی سماعت ہوئی۔ جسٹس شوکت عزیز صدیقی کے وکیل حامد خان نے دلائل دیے کہ سپریم جوڈیشل کونسل جج کے خلاف انکوائری کرنے کا اختیار رکھتی ہے جج کو فارغ نہیں کر سکتی، جسٹس صدیقی نے شوکاز نوٹس کا جواب دیا تھا جس میں کہا کہ ڈی جی آئی ایس آئی فیض حمید ان کے گھر آئے اور آئی ایس آئی ہیڈکوارٹرز سمیت گرین بیلٹس سے تجاوزات ہٹانے کا حکم واپس لینے کا کہا، جنرل فیض حمید نے پاناما کیس پر بھی اثرانداز ہونے کی کوشش کی جب جسٹس شوکت صدیقی نے کہا کہ وہ  نواز شریف کی اپیلوں کے حالے سے  اپنے حلف کے مطابق  میرٹ پر فیصلہ کرینگے تو  جنرل فیص حمید نے کہا کہ اس طرح تو ہماری دو سال کی محنت ضائع ہو جائے گی۔ جسٹس عمر عطا بندیال نے ان سے کہا کہ تعجب ہے کہ آپ سے ڈی جی آئی ایس آئی نے ایسی بات کی، آپ کو غصہ آئی ایس آئی پر تھا اور آپ نے تضحیک عدلیہ کی کی، آپ کو اپنے ادارے کے تحفظ کے لیے کام کرنا چاہئے تھا، ان اداروں کا سوچیں جو عدلیہ کے تحفظ کے لیے کام کرتے ہیں۔ وکیل حامد خان بولے کہ بار بھی عدلیہ کی حفاظت کے لیے کام کرتی ہے۔ جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ معذرت کے ساتھ بار کی اپنی ایک پالیسی ہے جس کے تحت وہ کام کرتا ہے، مانتے ہیں کہ بار ججز کی معاونت کے لیے ہمیشہ موجود ہے، بار کی تنقید کی وجہ سے جسٹس اقبال حمید الرحمان نے استعفی دیا، کیونکہ بار کئی بار جذباتی ہو جاتا ہے، مگر آپ کسی اور بات سے ناخوش اور پریشان تھے اور آپ نے اپنے ادارے اور چیف جسٹس کی تضحیک کر دی، آپ خود تسلیم کر رہے ہیں کہ آپ کی ڈی جی آئی ایس آئی سے ملاقاتیں ہوئیں، آپ دو بار ان سے ملے آپ کے ان سے تعلقات تھے۔ یہ سن کر جسٹس شوکت عزیز صدیقی نشست پر کھڑے ہو گئے اور جذباتی انداز میں بولے میرے فوج میں کسی سے کوئی تعلقات نہیں ہیں، ہر طرح کے خطرات کے باوجود میں اپنے خاندان کے ساتھ اسلام آباد میں مقیم ہوں، میں نے تقریر پریشر کو کم کرنے کیلئے کی، بدقسمتی سے میں دسمبر 2015 سے پریشر میں ہوں، سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور جسٹس آصف سعید کھوسہ تو چاہتے ہی مجھے نکالنا تھے۔ جسٹس عمر عطا نے شوکت عزیز صدیقی سے کہا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ آپ ایک دیانتدار شخص ہیں، ہم آپ کی تقریر نہیں سننا چاہتے، آپ نے تو نام گنوانے شروع کر دیے۔ عدالت نے کیس کی مزید سماعت دس جون تک ملتوی کردی۔

شوکت صدیقی

مزید :

صفحہ اول -