جمیل فخری کو مداحوں سے بچھڑے 10 برس بیت گئے

جمیل فخری کو مداحوں سے بچھڑے 10 برس بیت گئے
جمیل فخری کو مداحوں سے بچھڑے 10 برس بیت گئے

  

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان ٹی وی اور تھیٹر کے عظیم فنکار جمیل فخری کو اپنے چاہنے والوں سے بچھڑے دس برس بیت چکے ہیں مگر ان کا فن اور یادیں آج بھی لوگوں کے دلوں میں زندہ ہیں ۔

جمیل فخری اپنے منفرد اور اداکاری کے باعث پہچانے جاتے تھے ، ڈرامہ اندھیرا اجالا میں ان کا کردار جعر حسین  بہت پسند کیا گیا۔ انہوں نے ڈرامہ جنجال پورہ ، حصار، ایک محبت سو افسانے ، دلدل ، بندھن اور وارث سمیت کئی یادگار ڈراموں میں اپنے فن کا لوہا منوایا۔

1970ء کی دہائی میں انہوں نے اطہر شاہ خان کے اسٹیج ڈرامے ’’اندر آنا منع ہے‘‘ میں کام کیا ۔ انہوں نے واپڈا ہاؤس آڈیٹوریم اور الحمرا آرٹس کونسل لاہور میں تھیٹر کا آغاز کیا اور ٹی وی کے مشہور اداکاروں اور پروڈیوسرز کے ساتھ کام کرنا شروع کر دیا۔ 

انہوں نے اپنے وقت کے جن نمایاں اداکاروں کے ساتھ کام کیا ان میں عرفان کھوسٹ، خیام سرحدی، فردوس جمال، مسعود اختر اور رفیع خاور( ننھا) شامل تھے۔ 

جمیل فخری کے بیٹے کو امریکا میں قتل کر دیا تھا ، بیٹے کی وفات نے جمیل فخری کو اس قدر کمزور کر دیا کہ ان پر فالج کا حملہ ہوا اور وہ دس برس قبل 9 جون 2011 کو فن کی دنیا کا یہ ستارہ ہمیشہ کیلئے ڈوب گیا۔

مزید :

تفریح -