سکھ فار جسٹس کا آئندہ سال26جنوری کوخالصتان کیلئے ریفرنڈم کا اعلان 

سکھ فار جسٹس کا آئندہ سال26جنوری کوخالصتان کیلئے ریفرنڈم کا اعلان 

  

لاہور (جنرل رپورٹر)امریکہ میں مقیم سکھوں کی تنظیم سکھس فار جسٹس کے مرکزی رہنما اور وکیل برائے انسانی حقوق گرپت ونت سنگھ پنوں نے  بھارتی پنجاب میں ریاست خالصتان کے لئے 26 جنوری 2023 کو بھارتی پنجاب ہریانہ ہماچل پردیش میں ریفرنڈم کرانے کا اعلان کردیا اور شملہ اس کا دارالحکومت ہوگا لاہور پریس کلب میں امریکہ سے  ویڈیو لنک کے ذریعے پنجابی زبان میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے گرپت ونت سنگھ پنوں نے کہا کہ ہم بھارتی تسلط سے پنجاب کو آزاد کروانے کے لئے گلوبل ریفرنڈم کی مہم چلا رہے ہیں سکھ مذہب کو بھارت میں ہندو مذہب کا حصہ بنا دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ 6 جون 1984 کو دربار صاحب پر دوبارہ حملہ کیا گیا ہمارے ساتھیوں نے بہادری سے حملے کا جواب دیا اور شہادتیں پائیں اسی دن سکھوں نے فیصلہ کر لیا تھا کہ ہم بھارت کا حصہ بن کر نہیں رہ سکتے۔آج ہم وہ نقشہ بھی جاری کر رہے ہیں کہ جب بھارتی پنجاب آزاد ہو گا تو ان علاقوں کو خالصتان میں شامل کیا جائے گا ہماچل پردیش، ہریانہ، چندی گڑھ اور دیگر ایسے علاقے شامل ہیں جو 1947 کے بعد پنجاب بنا تھا۔ اس ریفرنڈم میں مسلمان، عیسائی سمیت بھارتی پنجاب کے تمام رہنے والے ووٹ ڈال سکیں گے۔گرپت ونت سنگھ پنوں نے کہا کشمیر کی آزادی کے لئے بھارتی پنجاب کی آزادی ضروری ہے وزیراعظم شہباز شریف اور وزیر خارجہ بلاول بھٹو سے گذارش ہے کہ وقت آ گیا ہے کہ پاکستان کشمیریوں کی طرح سکھوں کے لئے بھی آواز بلند کرے اور ان کو اخلاقی، سیاسی و سفارتی سپورٹ مہیا کریپاکستان بھارتی پنجاب کو خالصتان کے نام سے تسلیم کرے تاکہ اقوام متحدہ میں ہمارا کیس مضبوط ہو سکے،مسلح جدوجہد کرنے والے کوئی بھی ہوں، کسی بھی خطے میں ہوں وہ اپنی مسلح جدوجہد کی بجائے اقوام متحدہ کے احکامات کے مطابق ریفرنڈم کروانے پر غور کریں۔

خالصتان

مزید :

صفحہ آخر -