جنوبی پنجاب میں سوائن فلو کے مریضوں میں اضافہ لمحہ فکریہ ہے،ماہرین صحت

جنوبی پنجاب میں سوائن فلو کے مریضوں میں اضافہ لمحہ فکریہ ہے،ماہرین صحت

لاہور(پ ر)جنوبی پنجاب میں سوائن فلو کے مریضوں میںاضافہ لمحہ فکریہ ہے حکومت خصوصی اقدامات کرے تیز بخار ، نزلہ ، کھانسی ، جسم میں درد ، جسم ہونٹوں اور انگلیوں کا نیلا ہونا سانس لینے میں مشکل سوائن فلو کی علامات ہیںاگر تیز بخار (102ڈگری سے زیادہ ) تین دن میں نہ اترے تو یہ تشویش کی بات ہے معالجین کے کہنے کے مطابق آج کل سوائن فلو کا خطرہ شدید ہے اس لیے اگر کسی کو فلو کی علامات ہیں تو اسے چاہیے کہ وہ دیگر لوگوںسمیت گھر والوں سے بھی الگ ہو جائے کھانستے اور چھینکتے وقت زیادہ احتیاط سے کام لیں ضروری ہے کہ ایک شخص سے دوسرے شخص کے درمیان چھ فٹ کا فاصلہ ہو ایسے مریضوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ بار بار صابن سے ہاتھ دھوئیں ، جو ٹشو استعمال کریں اسے احتیاط سے ضائع کردیں، رومال کو جراثیم کش پانی سے دھوئیں سوائن فلو کا وائرس بہت نازک ہوتا ہے 7ڈگری درجہ حرارت یا صابن سے زیادہ ہو جاتا ہے ان خیالات کا اظہار مرکزی سیکرٹری اطلاعات فلاح طب پاکستا ن پروفیسر حکیم سید عمران فیاض پروفیسر حکیم سرفراز احمد بھٹی ، پروفیسر حکیم محمد افضل میو، حکیم فیصل طاہر صدیقی ، حکیم شوکت علی سندھو اور حکیم غلام فرید میر نے فلاح طب پاکستان کے زیر اہتمام سوائن فلو کے حولے سے منعقدہ مجلس مذاکرہ میں گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ ایسے افراد جن کو یہ علامات ہوں کے لیے بہتر ہے کہ وہ عوامی مقامات، سکولوں ، بسوں اور ہسپتالوں کے او ، پی ،ڈیز میں جانے سے گریز کریں ضرورت اس بات کی ہے حکومت ایسے افراد کو ڈاکٹروں اور معالجین سے مشاورت کے لیے ٹول فری فون نمبرز کا اعلان کریں انہوں نے کہا کہ سوائن فلو سے سب سے زیادہ خطرہ ہیلتھ کئیر ورکرز کو ہوتا ہے سوائن فلو کی ویکسینیشن کے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اس کی بھی زیادہ ہیلتھ کئیر ورکز کو ہوتی ہے تاہم حاملہ خواتین ، چھ ماہ سے کم عمر کے بچے ، دمہ کے مریض اور بہت زیادہ موٹے افراد کو بھی یہ ویکسین لگوا لینی چاہیے ۔

جنوبی پنجاب میں سوائن فلو کے مریضوں میں اضافہ لمحہ فکریہ ہے،ماہرین صحت

لاہور(پ ر)جنوبی پنجاب میں سوائن فلو کے مریضوں میںاضافہ لمحہ فکریہ ہے حکومت خصوصی اقدامات کرے تیز بخار ، نزلہ ، کھانسی ، جسم میں درد ، جسم ہونٹوں اور انگلیوں کا نیلا ہونا سانس لینے میں مشکل سوائن فلو کی علامات ہیںاگر تیز بخار (102ڈگری سے زیادہ ) تین دن میں نہ اترے تو یہ تشویش کی بات ہے معالجین کے کہنے کے مطابق آج کل سوائن فلو کا خطرہ شدید ہے اس لیے اگر کسی کو فلو کی علامات ہیں تو اسے چاہیے کہ وہ دیگر لوگوںسمیت گھر والوں سے بھی الگ ہو جائے کھانستے اور چھینکتے وقت زیادہ احتیاط سے کام لیں ضروری ہے کہ ایک شخص سے دوسرے شخص کے درمیان چھ فٹ کا فاصلہ ہو ایسے مریضوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ بار بار صابن سے ہاتھ دھوئیں ، جو ٹشو استعمال کریں اسے احتیاط سے ضائع کردیں، رومال کو جراثیم کش پانی سے دھوئیں سوائن فلو کا وائرس بہت نازک ہوتا ہے 7ڈگری درجہ حرارت یا صابن سے زیادہ ہو جاتا ہے ان خیالات کا اظہار مرکزی سیکرٹری اطلاعات فلاح طب پاکستا ن پروفیسر حکیم سید عمران فیاض پروفیسر حکیم سرفراز احمد بھٹی ، پروفیسر حکیم محمد افضل میو، حکیم فیصل طاہر صدیقی ، حکیم شوکت علی سندھو اور حکیم غلام فرید میر نے فلاح طب پاکستان کے زیر اہتمام سوائن فلو کے حولے سے منعقدہ مجلس مذاکرہ میں گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ ایسے افراد جن کو یہ علامات ہوں کے لیے بہتر ہے کہ وہ عوامی مقامات، سکولوں ، بسوں اور ہسپتالوں کے او ، پی ،ڈیز میں جانے سے گریز کریں ضرورت اس بات کی ہے حکومت ایسے افراد کو ڈاکٹروں اور معالجین سے مشاورت کے لیے ٹول فری فون نمبرز کا اعلان کریں انہوں نے کہا کہ سوائن فلو سے سب سے زیادہ خطرہ ہیلتھ کئیر ورکرز کو ہوتا ہے سوائن فلو کی ویکسینیشن کے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اس کی بھی زیادہ ہیلتھ کئیر ورکز کو ہوتی ہے تاہم حاملہ خواتین ، چھ ماہ سے کم عمر کے بچے ، دمہ کے مریض اور بہت زیادہ موٹے افراد کو بھی یہ ویکسین لگوا لینی چاہیے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1