ایس پیز اور ڈی ایس پیز انصاف دلانے میں دلچسپی نہیں لیتے ہیں،عوامی رائے

ایس پیز اور ڈی ایس پیز انصاف دلانے میں دلچسپی نہیں لیتے ہیں،عوامی رائے
ایس پیز اور ڈی ایس پیز انصاف دلانے میں دلچسپی نہیں لیتے ہیں،عوامی رائے

  

لاہور( کرائم سیل) ڈی آئی جی انویسٹی گیشن کے دفتر میں آنے والے سائلین میں زاہد تر نے الزامات عائد کئے ہیں، کہ ڈی آئی جی اور ایس ایس پی کے احکامات کے باوجود ایس پیز اور ڈی ایس پیز انصاف دلانے میں دلچسپی نہیں لیتے ہیں، سائلین کا کہنا تھا کہ پہلے سی سی پی او کے دفتر میں شکایات لے کر جانا پڑتا ہے اس کے بعد ڈی آئی جی انویسٹی گیشن اور پھر ایس ایس پی انویسٹی گیشن کے سامنے پیش ہونا پڑتا ہے ، اس کے

بعد متعلقہ ایس پی کے پاس جائیں تو وقت گزر چکا ہوتا ہے اور اگلے روز ایس پی کے دفتر میں جانے پر ریڈر اور سٹاف افسر یہ کہہ کر ٹال دیتا ہے کہ آپ کی درخواست ڈی ایس پی کے پاس چلی گئی ہ اور ڈی ایس پی کے دفتر جانے پر پھر معلوم ہوتا ہے کہ جس تفتیشی افسر کے خلاف شکایت کی تھی اور اس طرح چار سے پانچ روز تک چکر لگانے کے بعد پھر دوبارہ سی سی پی او کہ ڈی آئی جی انویسٹی گیشن کے پاس چکر لگائیں تو ڈی آئی جی کے ریڈر اور سٹاف افسر یہ کہ کر ٹال دیتا ہے کہ دو دن بعد آنا اور ایس پی اور انچارج سے رپورٹ منگوانے پر ڈی آئی جی اور ایس ایس پی انویسٹی گیشن سے ملاقات کروائی جائے گی۔

مزید : علاقائی