متاثرین تھر نے ہجرت شروع کردی ، سینکڑوں دیہات خالی ہوگئے

متاثرین تھر نے ہجرت شروع کردی ، سینکڑوں دیہات خالی ہوگئے
متاثرین تھر نے ہجرت شروع کردی ، سینکڑوں دیہات خالی ہوگئے

  

تھر، کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) تھر پارکر میں خشک سالی اور بیماریوں سے پریشان حال عوام نے دیگر علاقوں کیلئے ہجرت شروع کردی ہے اور ر اب تک سینکڑوں دیہات خالی ہو گئے ہیں۔میڈیارپورٹ کے مطابق صحرائے تھر میں خشک سالی اور حکومتی بے حسی نے مشکلات کو اس قدر بڑھادیا ہے کہ متاثرین شہروں کی طرف نقل مکانی پرمجبورہوگئے،ہسپتالوں میں غذائی قلت کے شکار مریض بچوں کی تعداد میں بھی تشویشناک حد تک اضافہ ہوگیا ہے۔ 24 گھنٹوں کے دوران 375 بچے سول ہسپتال مٹھی لائے گئے، بھوک اور پیاس کی تکلیف سے بلکتے یہ بچے، تھرپارکر کے مختلف علاقوں سے غذائی قلت کا شکار ہو کر سول اسپتال مٹھی پہنچے۔بھوک اور بیماریوں سے سسکتے عوام کیلئے امداد کے حکومتی دعوے ضرور سامنے آئے لیکن اب تک سرکاری گوداموں پر تالے لگے ہیں۔ متاثرین کا کہنا ہے کہ ان کے پاس کھانے کیلئے ہی کچھ نہیں وہ بیمار بچوں کا علاج کیسے کراسکتے ہیں۔وزیراطلاعات سندھ شرجیل میمن نے کہاہے کہ تھر میں بچوں کی اموات کو غلط اندازسے پیش کیاگیا، تھرمیں زیادہ تر بچوں کی اموات شدید سردی کے باعث ہوئیں ،خشک سالی سے نہیں۔

مزید : قومی