الیکشن کمیشن انتخابی امیدواروں سے سرٹیفکیٹ لے ، وراثت میں بہن ، بیٹی کا حق ادا کیا ہے ، سراج الحق

الیکشن کمیشن انتخابی امیدواروں سے سرٹیفکیٹ لے ، وراثت میں بہن ، بیٹی کا حق ...

لاہور (وقائع نگار) خواتین کے حقوق کا ایک دن منانے سے والدین کے احترام کا حق ادا نہیں ہوتا۔ خواتین کے حقوق کے علمبردار ادارے پورا سال خامو ش رہتے ہیں اور ایک دن چند اجلاس کر کے اپنے فرض منصبی سے عہدہ بر ہو جاتے ہیں۔ امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے اسلام آباد میں پارلیمنٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے کہاکہ اسلام نے 365 دن خواتین کے حقوق کی ادائیگی کا حکم دیاہے۔ ہمارے ہاں ماں کے قدموں تلے جنت ہے۔ افسوس یہ ہے کہ ہمارے معاشرے میں بھی خواتین کو وہ حقوق نہیں دیے جارہے جن کا حکم اسلام نے دیاہے۔ خواتین کا سب سے زیادہ استحصال مغربی معاشرے میں ہورہاہے جہاں ماں ، بہن اور بیٹی کے مقدس رشتوں کی پہچان ختم ہوچکی ہے۔سینیٹر سرا ج الحق نے کہاکہ خواتین کے لیے وراثت میں قانونی حق موجود ہے مگر عملاً انہیں اس حق سے محروم رکھا جارہاہے۔ جہیز کی لعنت نے غریب کے لیے اپنی بیٹی کے ہاتھ پیلے کرنا مشکل بنادیا ہے۔ گزشتہ چند سالوں میں دہشتگردی میں شہید ہونے والے سرکاری ملازمین اور عام افراد کے والدین اور بیٹیوں کی کفالت کا سرکاری سطح پر کوئی انتظام نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہاکہ خواتین کو تعلیم کا حق دیا گیاہے لیکن ان کے لیے علیحدہ یونیورسٹیاں اور تعلیمی ادارے نہیں بنائے گئے۔ آبادی کا 51 فیصد خواتین پر مشتمل ہے ، انہیں اسلام میں دیے گئے حقوق سے محروم رکھا جارہاہے۔سینیٹرسراج الحق نے کہاکہ ہماری تجویز ہے کہ الیکشن کمیشن الیکشن لڑنے والوں سے سر ٹیفکیٹ لے کہ اس نے وراثت میں بہن ، بیٹی کا حق ادا کیاہے۔ کچھ لوگ خواتین کو بازار کی زینت بناناچاہتے ہیں۔ اسلام نے خاتون کو گھر کی ملکہ بنایا ہے۔ ماں ، بہن ، بیٹی کے مقدس رتبے سے نوازا ہے۔ انہوں نے کہاکہ خواتین پر ہر طرح کا تشدد ختم کرنے کی ضرورت ہے۔ گزشتہ سال کے محدود عرصہ میں خواتین پر تشدد کے 53 ہزار سے زائد کیس درج ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ خواتین ممبران اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز سے محروم رکھا جاتاہے حالانکہ انہیں بھی مردوں کے برابر فنڈز ملنے چاہئیں۔ انہوں نے کہاکہ پبلک مقامات پر خواتین کے لیے علیحدہ کاؤنٹرز بنانے کی ضرورت ہے۔ اسی طرح پبلک ٹرانسپورٹ ، ہوٹلوں ، ریلوے اور ہوائی جہاز وں میں خواتین کے احترام کو یقینی بنانا ضروری ہے۔ ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ ہر بیٹی کے ہاتھ میں قلم اور کتاب تھمائے ، بے گھر خواتین کو چھت فراہم کی جائے۔ انہو ں نے کہاکہ جماعت اسلامی خواتین کے حقوق کی سب سے بڑی علمبردار ہے اور ہم خواتین کی ترقی پر یقین رکھتے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر