1000سے زائد سرکاری سکولوں میں نصب ایمرجنسی الارم خراب

1000سے زائد سرکاری سکولوں میں نصب ایمرجنسی الارم خراب

لاہور(حافظ عمران انور )سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ حکومت اور محکمہ داخلہ کی طرف سے بنائے گئے ایس او پیز پر عمل درآمد کروانے میں ناکام ،ذرائع کے مطابق صوبائی دارلحکومت میں اے اور اے پلس کیٹیگری کے 1000سے زائد ہائی، مڈل اور پرائمری سکول شامل ہیں سرکاری سکولوں میں نصب ایمرجنسیPanic alaram) (الارم خراب ہونے کا انکشاف ہوا ہے ۔واضح رہے کہ ایمرجنسیPanic alaram) (الارم پولیس ڈیپارٹمنٹ ،سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ اور یوفون کے تعاون سے ایک میکانزم کے تحت کام کرتے ہیں ۔اسی طرح پرائیویٹ سکولوں میں اے اور اے پلس کیٹیگری کے سکو لوں میں پولیس ڈیپارٹمنٹ ،پرائیویٹ سکول مالکان اور یوفون کے تعاون سے ایمر جنسی الارم کام کرتے ہیں ۔خراب ایمرجنسی الارم کے باعث سرکاری سکولوں میں کسی بھی ہنگامی صورتحال سے بچنے کے لئے متعلقہ تھانے سے رابطہ قائم کرنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ جس سے سکولوں میں دہشت گردانہ حملوں اور کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے بچنے کے لئے سکول سربراہان کو پولیس کو بروقت اطلاع دینے میں دقت پیش آرہی ہے ذرائع کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب نے سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کو لاہور کے تمام میل اور فی میل سکولوں میں طلبا ء کی سیکورٹی کو پیش نظر ایس او پیز پر عمل درآمد کروانے کے احکامات جاری کئے تھے مگر تاحال سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کی طرف سے واضح احکامات کے باوجود سکولوں کے سربراہان ایس او پیز پر عمل درآمد نہیں کر رہے جس کا واضح ثبوت لاہور بھر کے 1000سے زائد اے اور اے پلس کیٹیگری کے سکولوں میں ایمرجنسی الارم خراب ہیں۔خراب ہونے والے سکولوں میں ہائی، مڈل اور پرائمری سکول شامل ہیں۔باخبر ذرائع کے مطابق محکمہ سکول ایجوکیشن نے ایمرجنسی خراب الارم والے سکولوں کے سربراہان کو الارم ٹھیک کرانے کی ہدایت کرتے ہوئے نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے ۔ نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ سکولوں کے ایمرجنسی الارم ٹھیک نہ کرائے گئے تو ہیڈ ٹیچرز کے خلاف کارروائی ہوگی۔متعلقہ سکولوں میں زیر تعلیم طلباء کے والدین اس صورتحال سے شدید پریشان ہیں اور انہوں نے کہا ہے کہ ملک میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی کے باعث حکومت اور سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ سکول سربراہان کو پابند کرے کہ وہ جلد از جلد سکولوں میں ایمرجنسی الارم کو فوری طور پر ٹھیک کروائیں ۔

ایمرجنسی الارم خراب

مزید : صفحہ آخر