میٹرو بس کے کرائے نہ بڑھانے کا مستحسن فیصلہ

میٹرو بس کے کرائے نہ بڑھانے کا مستحسن فیصلہ

وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار نے ماس ٹرانسپورٹ اتھارٹی کے بورڈ کی طرف سے میٹرو/سپیڈو بسوں کے کرایہ میں اضافے کی تجویز مسترد کر دی اور کرایہ بدستور 20روپے رہنے دیا گیا ہے کہ اس سے عام اور کم آمدنی والے شہری مستفید ہوتے ہیں۔ میٹرو بس کا منصوبہ سابق وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف کے دور میں مکمل ہوا۔ ابتدا میں تجویز کیا گیا کہ لاہور میٹرو بس کا کرایہ گجومتہ سے شاہدرہ کے درمیان تین مراحل طے کر کے20سے60روپے وصول کیا جائے۔ تاہم بس کے افتتاح کے موقع پر وزیراعلیٰ نے یکساں20روپے کرایہ مقرر کر دیا اور یہ طریقہ راولپنڈی، اسلام آباد میٹرو بس کے لئے بھی اختیار کیا گیا، جبکہ ملتان میٹرو کا کرایہ بھی انہی کے برابر ہے۔ لاکھوں شہری ان سے مستفید ہو رہے ہیں۔کرایوں میں رعایت کی وجہ سے حکومت سالانہ قریباً چھ ارب روپے کی سبسڈی برداشت کررہی ہے کہ رعایتی کرائے کی وجہ سے ٹرانسپورٹ منافع بخش نہیں۔ تحریک انصاف سبسڈی کے خلاف ہے اور بتایا جا رہا تھا کہ میٹرو بس سسٹم پر بھی یہ رعایت ختم کی جائے گی۔ نقصان کم کرنے کے لئے تجاویز طلب کی گئیں تو ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کی طرف سے کرایوں میں10روپے اضافے کی تجویز پیش کی گئی،حتمی فیصلے کے لئے منصوبہ وزیراعلیٰ کے سامنے پیش کیا گیا تو انہوں نے اسے مسترد کر دیا اور ہدایت کی کہ اخراجات کو کنٹرول کر کے نقصان کم کرنے کی کوشش کی جائے،شہریوں پر بوجھ نہ ڈالا جائے، چنانچہ کرایوں میں اضافہ نہیں کیا گیا۔ عوام نے اس اچھے فیصلے کی تعریف کی اور کہا ہے کہ مہنگائی ختم کرنے کے لئے بھی اچھے فیصلے کئے جائیں۔

مزید : رائے /اداریہ