نیشنل ایکشن پلان پر بروقت عمل ہوتا تو آج پوزیشن کچھ اور ہوتی، بلاول بھٹو

نیشنل ایکشن پلان پر بروقت عمل ہوتا تو آج پوزیشن کچھ اور ہوتی، بلاول بھٹو

کراچی( سٹاف رپورٹر) چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے نیشنل ایکشن پلان پر بروقت عمل ہوتا تو آج پوزیشن کچھ اور ہوتی، ہمارے پاس دنیا کو دکھانے کیلئے ثبوت موجود ہوتے، احتساب ایک ہی بار ہوتا تو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جاتا،تحریک انصاف نے الیکشن کالعدم جماعتوں کے تعاون سے لڑا تھا، حکومت سنجیدہ ہے تو کالعدم جماعتوں کے حامی وزیروں کو باہر نکالے۔ برطانوی نشریاتی ادا ر ے کو انٹرویو دیتے ہوئے چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کالعدم تنظیموں کیخلاف حکومت کے کریک ڈا ؤ ن پر شک ہے، امید ہے اس بار کریک ڈا ؤ ن صحیح معنوں میں ہو گا، چیک اینڈ بیلنس کیلئے قومی سلامتی کی پارلیمانی کمیٹی کو فعال کرنا چاہیے۔ مودی اب بھی پاکستا ن کیخلاف جارحانہ اقدامات کا ارادہ رکھتے ہیں، مودی پلوامہ حملے کو سیاسی مقاصد کیلئے استعمال کر رہے ہیں، وزیر اعظم مودی انتہا پسندی کی سیاست کھیل رہے ہیں، مودی کو یقیناًآئندہ انتخابات میں اس کا فائدہ نظر آ رہا ہے۔بلاول بھٹو نے کہا ملک میں ایوب خان سے لیکر ضیاالحق تک یہی سنا پہلے احتساب پھر انتخاب، 90 کی دہائی میں پولیٹیکل انجینئرنگ کی گئی، احتساب کے درست نظام کی ضرورت ہے، جہاں انصاف سب کیلئے ہو۔ قانون کی بالادستی قائم رہتی تو کوئی مسئلہ نہ ہوتا، پیپلزپارٹی کیخلاف سازشوں میں آئین کی پاسداری نہیں کی جا رہی، آرٹیکل 10 اے ہر شہری کو آزاد اور شفاف ٹرائل کا حق دیتا ہے۔

مزید : صفحہ اول /رائے