مکئی کے امریکی بیج پاکستان میں متعارف نہ کروائے جائیں، شاہد رشید بٹ

مکئی کے امریکی بیج پاکستان میں متعارف نہ کروائے جائیں، شاہد رشید بٹ

اسلام آباد (آن لائن)اسلام آباد چیمبر آف سمال ٹریڈرز کے سرپرست شاہد رشید بٹ نے کہا ہے کہ مکئی کے امریکی بیج پاکستان میں متعارف نہ کروائے جائیں۔ پینتیس ممالک میں ان بیجوں پر پابندی عائد ہے جبکہ دیگر درجنوں ممالک اسکے اثرات کا جائزہ لے رہے ہیں۔ان بیجوں سے ملکی زراعت اورلاکھوں کاشتکارمتاثر ہونگے۔ شاہد رشید بٹ نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ بیج اور زرعی ادویات بنانے والی متنازعہ امریکی کمپنی کو ملک کے زرعی شعبے سے دور رکھا جائے ورنہ بھاری نقصانات کا سامنا کرنا ہو گا۔جن ممالک نے دباؤ میں آ کر ان کمپنیوں کو جنیاتی طور پر تبدیل شدہ بیج اور ادویات بیچنے کی اجازت دی وہاں زراعت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا اور فوڈ سیکورٹی اور صحت عامہ کے سنگین مسائل نے جنم لیا۔امریکی کمپنی کے بیجوں کے ہاتھوں کپاس کے شعبہ کی تباہی کے بعد مزید فصلوں کو انکے رحم و کرم پر نہ چھوڑا جائے۔ پاکستان میں مکئی1.33 ملین ہیکٹر رقبہ پر کاشت کی جاتی ہے اور اسکی پیداوارساٹھ لاکھ ٹن سے زیادہ ہے۔

جس میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔مکئی کی پینسٹھ فیصد پیداوار کی کھپت پولٹری سیکٹر میں ہے جبکہ ایک لاکھ ٹن مکئی برامدبھی کی جاتی ہے۔اگر مکئی کے شعبہ میں غیر ملکی مداخلت کا دروازہ کھل گیا تو کاشتکاروں کا مستقبل تاریک اور پولٹری کی صنعت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچ سکتاہے۔ #/s#

مزید : کامرس /رائے