جانوں پر کھیل کر آئین کی حفاظت کریں گے،شریعت کے بغیر جمہوریت اور مارشل لاء عوام کو عدل و انصاف کا  نظام نہیں دے سکے:سینیٹر سراج الحق

جانوں پر کھیل کر آئین کی حفاظت کریں گے،شریعت کے بغیر جمہوریت اور مارشل لاء ...
جانوں پر کھیل کر آئین کی حفاظت کریں گے،شریعت کے بغیر جمہوریت اور مارشل لاء عوام کو عدل و انصاف کا  نظام نہیں دے سکے:سینیٹر سراج الحق

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ حکومت اللہ اور عوام سے کئے گئے وعدوں کو پورا کرے اور عوام کو ریلیف دے،عوام سیاسی لیڈروں کے اختلافات کی بجائے اپنے مسائل کا حل چاہتے ہیں،71سال کے تجربات نے ثابت کردیا ہے کہ شریعت کے بغیر جمہوریت اور مارشل لاء عوام کو عدل و انصاف کا وہ نظام نہیں دے سکے جو اسلام دے سکتا ہے ،کچھ لوگوں کی خواہش ہے کہ آئین پاکستان سے اسلامی دفعات کو حذف کردیا جائے،جس قوم نے لاکھوں جانوں کی قربانی دیکر کلمہ کی بنیاد پر یہ ملک حاصل کیا تھا وہ جانوں پر کھیل کر پاکستان کے آئین کی حفاظت کریں گے ، جماعت اسلامی کی رابطہ عوام اوردفاع پاکستان مہم کا بنیادی مقصد عوام کو نظریہ پاکستان پر جمع کرنا ہے،ہمارا دشمن ہمارے اوپر مگ 21سے بھی حملے کررہا ہے اور اپنی تہذیبی اور نظریاتی یلغار کے ذریعے بھی ہماری نوجوان نسل کو گمراہ کرنا چاہتا ہے ،مگ 21کے حملوں سے تہذیبی یلغار زیادہ خطرناک ہے،ملک کی جغرافیائی سرحدوں کی طرح نظریاتی سرحدوں کا دفاع بھی ضروری ہے لیکن ملکی اقتدار پر مسلط رہنے والوں نے کبھی سنجیدگی سے اس طرف توجہ نہیں دی،خواتین کے حقوق کے حوالے سے قوم میں دورائے نہیں ہیں مگر جس طرح کتبے اٹھا کرگزشتہ روز وفاقی دارلحکومت میں ایک محدودطبقہ کی خواتین نے عورت کی آزادی کیلئے مظاہرہ کیا ہے اس سے پوری قوم کا سر شرم سے جھک گیا ہے ۔

 اسلام آباد میں کارکنوں سے ملاقاتوں کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ 1991میں قومی اسمبلی میں شریعت ایکٹ پاس ہوا تھا مگر 28سال بعد بھی اس پر عمل درآمد کی صورتحال یہ ہے کہ کسی کو اس بارے میں کچھ معلوم نہیں اور جب حکومت سے سوال کیا گیا تو جواب ملا کہ ڈیپارٹمنٹ سے پوچھ کر بتائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ اگر سینیٹ اور قومی اسمبلی سے پاس ہونے کے باوجود قوانین پر عمل درآمد کی یہ صورتحال ہوگی تو ملک کس طرح آگے بڑھ سکتا ہے؟اس منفی سوچ کی وجہ سے پاکستانی قوم ایک قوم نہیں بن سکی اور اسی سوچ نے بنگلا دیش بنایا تھا ۔انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی معاشرے میں پاکستانیت کی سوچ کوفروغ دینا چاہتی ہے تاکہ قومی یکجہتی اور اتحادکے ذریعے پاکستان کو درپیش مسائل کا حل ڈھونڈا جاسکے ۔

سینیٹر سراج الحق نے کارکنان کو ہدایت کی کہ ملک میں اسلامی انقلاب کی منزل کو حاصل کرنے کیلئے کمر بستہ ہوجائیں اور موسم بہار کو ملک میں اسلام کی بہار کا موسم بنا دیں ۔انہوں نے کہا کہ ایک کامیاب رابطہ عوام مہم کے ذریعے ناصرف پاکستان کو اسلامی و خوشحال بنایا جاسکتا ہے بلکہ اس کے دفاع کو بھی ایسا مضبوط اور مستحکم بنایا جاسکتا ہے کہ کسی دشمن کو اس کی طرف میلی آنکھ سے دیکھنے کی جرأت نہیں ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ایک طرف کشمیری اسلامی پاکستان کے لئے جانوں کے نذرانے پیش کررہے ہیں اور دوسری طر ف پاکستان میں بیٹھ کر کچھ لوگ ہندوانہ تہذیب و کلچر کو فروغ دے رہے ہیں

مزید : قومی