پرویز الٰہی کا ڈپٹی کمشنر فیصل آباد کے رویہ پر اظہار برہمی، آج اسمبلی طلب کر لیا 

پرویز الٰہی کا ڈپٹی کمشنر فیصل آباد کے رویہ پر اظہار برہمی، آج اسمبلی طلب کر ...

  

  لاہور(نمائندہ خصوصی) سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی کاڈپٹی کمشنرفیصل آباد کے ناروارویے پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے آج پنجاب اسمبلی طلب کر لیا  اجلاس میں حکومت کے اخراجات سمیت مختلف محکموں کی آڈٹ رپورٹس بھی پیش کی گئی   پنجاب اسمبلی کااجلاس گزشتہ روزبھی اپنے مقررہ وقت کی بجائے ایک گھنٹہ بیس منٹ کی تاخیر سے سپیکر چوہدری پرویز الٰہی کی صدارت میں شروع ہوا۔ اجلاس میں محکمہ مائنز اینڈ منرلز کے سوالات کے جوابات دئیے جانے تھے لیکن وقفہ سوالات کو موخر کردیا گیا۔اجلاس کے آغازمیں ہی سپیکر چوہدری پرویز الٰہی نے ڈپٹی کمشنر فیصل آباد کے ناروا رویے پر برہمی کا اظہار کیا اورکہا کہ ڈپٹی کمشنر فیصل آباد میرے سمیت کسی کی نہیں سن رہا،وہ جھوٹ بولتا ہے کہ میٹنگ میں ہوں جبکہ ہوتا گھر پر ہے۔سپیکر پنجاب اسمبلی نے ڈپٹی کمشنر کو آج   اسمبلی بلانے کی رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ فیصل آباد میں ریسکیو 1122 کا 10کروڑ کی لاگت سے اسٹیشن بنناہے اور رقم بھی موجودہے، ڈی جی ریسکیو کو فیصل آباد میں 1122 اسٹیشن کیلئے خط لکھا لیکن کچھ نہیں ہوا، جب ڈپٹی کمشنر کوکال کی تو اپنے گن مین کو ٹیلی فون پکڑا دیا اور خود گھر تھا،ڈپٹی کمشنرصوبائی وزیر کی بھی بات نہیں سن رہا سپیکر نے سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے رولنگ دی جس میں انہوں نے فیصل آباد کے ڈپٹی کمشنر اور ریسکیو 1122 کے انچارج کو آج پنجاب اسمبلی بلا نے کی ہدایت کردی  اس موقع پر رکن اسمبلی خلیل طاہر سندھو نے سپیکر کی بات نہ سننے پر ڈپٹی کمشنر فیصل آباد کے رویے کی مذمت کی اور کہا کہ آپ ڈپٹی وزیر اعظم اور وزیر اعلی پنجاب رہے اور ایک 18گریڈ کا آفیسر بات سننے کو تیار نہیں، ہاؤس کے تقدس کے معاملے پر سیاسی جماعتوں سے بالا ترہو کر ہمیں ایک ہوناہوگا  اجلاس میں وزیر آباد گوجرانوالہ سے (ن) لیگ کی نومنتخب رکن طلعت محمود شوکت نے اسمبلی رکنیت کا حلف اٹھا لیا اجلاس میں حکومت پنجاب کے اخراجات کی آڈٹ رپورٹ برائے سال 2019-20،محکمہ آبپاشی، مواصلات وتعمیرات، اربن ڈویلپمنٹ، پبلک ہیلتھ انجینئرنگ، آبپاشی، بلدیات، انرجی ڈویلپمنٹ سمیت مختلف محکموں کی آڈٹ رپورٹس پیش کردی گئیں جس کے بعد پنجاب اسمبلی کا اجلاس آج  دوپہر 2 بجے تک ملتوی کردیا گیا۔

پنجاب اسمبلی اجلاس

مزید :

صفحہ آخر -