جوڈیشیل کمیشن رضا خان کو وفاقی شرعی عدالت کا چیف جسٹس مقرر کرنے کی سفارش

جوڈیشیل کمیشن رضا خان کو وفاقی شرعی عدالت کا چیف جسٹس مقرر کرنے کی سفارش

اسلام آباد(اے این این) جوڈیشل کمیشن نے سپریم کورٹ کے سابق جج سردار رضا خان کو وفاقی شرعی عدالت کا چیف جسٹس مقررکرنے جبکہ سندھ ہائیکورٹ میں چار ایڈیشنل ججوں کی تعیناتی کی سفارش کردی، ایڈیشنل جج کے طورپر تعیناتی کےلئے محمد حسن کانام مسترد ، چار ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججوںکی تعیناتی کےلئے ناموں پر غور مو¿خر کردیا۔جمعرات کوجوڈیشل کمیشن کااجلاس چیف جسٹس جسٹس تصدق حسین گیلانی کی زیرصدارت اسلام آباد میں ہوا جس میں وفاقی شرعی عدالت میںچیف جسٹس اورسندھ ہائی کورٹ میں چارایڈیشنل ججوں کی تعیناتی کےلئے نامو ں پرغورکیاگیا۔کمیشن نے جسٹس (ر)سردار رضا خان کو وفاقی شرعی عدالت کا چیف جسٹس مقررکرنے کی منظوری دے دی ۔سردار رضا خان اس سے قبل سپریم کورٹ میں جج کے فرائض انجام دے چکے ہیں۔جوڈیشل کمیشن نے سندھ ہائیکورٹ کے لیے 4ایڈیشنل ججوں کے ناموں کی بھی سفارش کی جن میں محمد اقبال کہلوڑو،شہاب سرکی ،سید ظہیر الرحمن ناصر اور احمدرضانقوی کے نام شامل ہیں ۔ کے کے آغاکے نام پر غور سے متعلق معاملہ مو¿خر کردیاگیا اس کے علاوہ چار ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججز کی تعیناتی کا معاملہ بھی مو¿خر کردیا گیا ہے جن میں غلام قادر لغاری ،عبدالغنی سومرو ، سید صغیر حسین زیدی اور رشید احمد سومرو شامل ہیں۔کمیشن نے محمد حسن کا نام ایڈیشنل جج کے طورپر تعیناتی کا معاملہ مسترد کردیا۔جوڈیشنل کمیشن کی طرف سے بھجوائی جانے والی سفارشات کاپارلیمانی کمیٹی چودہ روزکے اندرجائزہ لے گی اورکمیٹی میں منظوری کی صورت میں سمری وزیراعظم کے ذریعے صدرمملکت کوبھجوائی جائے گی جوججوں کی تعیناتی کی حتمی منظوری دیں گے ۔ادھرمیڈیارپورٹ کے مطابق اسلام آبادہائی کورٹ کے جج ریاض احمدخان آئندہ چندروزمیں ریٹائرہوجائیں گے جس کے بعداسلام آبادہائی کورٹ میں صرف تین جج رہ جائیں گے ۔ ہائی کورٹ میں ججوں کی کل آسامیاں سات ہیں جن میں تین پہلے ہی خالی پڑی ہیں ۔ خالی آسامیوں پرججوں کی تعیناتی نہ ہونے کے باعث مقدمات فوری نمٹانے کے عمل میں مشکلات پیش آرہی ہیں ۔

 جوڈیشل کمیشن

مزید : صفحہ اول