داعش کا زور توڑنے کا منصوبہ، القاعدہ کی افغان طالبان سے اتحاد کی کوششیں

داعش کا زور توڑنے کا منصوبہ، القاعدہ کی افغان طالبان سے اتحاد کی کوششیں

واشنگٹن(اظہرزمان، بیوروچیف)افغانستان میں موجود القاعدہ کے کارندے ملک کے مشرقی حصے میں داعش کے بڑھتے ہوئے زور کو توڑنے کے لئے افغان طالبان اور دوسرے مقامی دہشتگرد گروہوں کے ساتھ اتحاد پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ نیٹو کے کیمونیکیشن مشن کے سربراہ امریکی بریگیڈیئر جنرل کلیو لینڈ نے کابل سے ایک ٹیلی کانفرنس کے ذریعے واشنگٹن میں پینٹا گون ہیڈ کوارٹرز میں میڈیا کو بتایا کہ اس وقت دو مشرقی صوبوں کنہار اور غز نی کے علاوہ جنوبی صوبے قندھار میں القاعدہ کے تقریباََ ایک سو سے تین سے کارندے سرگرم ہیں ۔ القاعدہ کے یہ کارندے زیادہ تر پاکستان میں اس کے مبینہ اصل مرکز سے آئے ہیں تاہم ان میں سے کچھ بھارت میں قائم نئے سیل ’’برصغیرمیں القاعدہ ‘‘ کی طرف سے افغانستان میں داخل ہوئے ہیں۔ بریگیڈیئر جنرل کلیو لینڈ نے بتایا کہ حاصل نتیجہ یہ ہے کہ القاعدہ ابھی تک افغانستان میں سرگرم ہے تاہم اس کی تعداد زیادہ نہیں ہے ۔ اس وجہ سے داعش کے ساتھ ساتھ القاعدہ کے ٹھکانوں کو بھی ٹارگٹ کیا جا رہا ہے ۔ امریکی ڈرون اور دیگر جنگی طیاروں نے اپریل میں اس مقصد کیلئے 19حملے کئے ۔

داعش کا زور

مزید : صفحہ آخر