3 سال میں پاکستان سے 15ارب ڈالر سے زائد رقم بھارت ٹرانسفر کی گئی، ورلڈبینک

3 سال میں پاکستان سے 15ارب ڈالر سے زائد رقم بھارت ٹرانسفر کی گئی، ورلڈبینک

اسلام آ با د (خصوصی رپورٹ) عالمی بینک نے ترسیلات، امیگریشن رپورٹ اور منی لانڈرنگ الزامات پر وضاحت جاری کرتے ہوئے کہا ہے عالمی بینک کی ترسیلات اور امیگریشن رپورٹ 2016 سے متعلق خبریں غلط ہیں۔ ترسیلات اور امیگریشن رپورٹ کا مقصد دنیا بھر میں ا میگریشن اور ترسیلات کا تخمینہ لگانا ہے، رپورٹ میں منی لانڈرنگ یا کسی کے بھی نام کا ذکر نہیں ۔عالمی ادارے کے مطابق رپورٹ میں عا لمی بینک نے دو ممالک کے درمیان میں ترسیلات کا تخمینہ لگانے کیلئے ورکنگ پیپر کی میتھاڈولوجی کا استعمال کیا ہے،ورلڈ بینک کے مطابق سٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے بھی 4 اعشاریہ 9 ارب ڈالر کی ترسیلات کے حوالے سے وضاحت کی گئی ہے، سٹیٹ بینک نے 21 ستمبر 2016 کو 4 اعشاریہ 9 ارب ڈالر کی ترسیلات کی بھی تردید کی ہے۔واضح رہے ورلڈ بنک نے ستمبر 2016ء کی اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ گزشتہ ترین سالوں میں پاکستان سے 15ارب ڈالر سے زائد کی رقم بھارت ٹرانسفر کی گئی ،جس میں مالی سال 2014-15 کے دوران چار اعشاریہ سات ارب ڈالر جبکہ مالی سال 2015-16کے دوران 4.9ارب ڈالر بھیجے گئے تھے۔رپورٹ میں مزیدکہاگیا کہ پاکستان سے بھارت سالانہ 5ارب ڈالر کی ٹرانزیکشن ہوتی ہے ۔

ورلڈ بینک

مزید : صفحہ اول