”استغفراللہ!!! اللہ ہی بچائے ایسے لباس سے جو۔۔۔“ صباءقمر نے اپنی ایسی تصاویر ”ہاٹ“ کہہ کر شیئر کر دیں کہ پاکستانی ان کا لباس دیکھ کر ہی غصے سے آگ بگولہ ہو گئے، دیکھ کر آپ کو بھی یقین نہیں آئے گا کہ یہ صباءقمر ہے

”استغفراللہ!!! اللہ ہی بچائے ایسے لباس سے جو۔۔۔“ صباءقمر نے اپنی ایسی تصاویر ...
”استغفراللہ!!! اللہ ہی بچائے ایسے لباس سے جو۔۔۔“ صباءقمر نے اپنی ایسی تصاویر ”ہاٹ“ کہہ کر شیئر کر دیں کہ پاکستانی ان کا لباس دیکھ کر ہی غصے سے آگ بگولہ ہو گئے، دیکھ کر آپ کو بھی یقین نہیں آئے گا کہ یہ صباءقمر ہے

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) صباءقمر پاکستان کی ان چند اداکاراﺅں میں سے ایک ہیں جنہیں اپنے ملک کے علاوہ بھارت میں بھی خوب شہرت ملی۔ وہ ناصرف اپنی بہترین ادکاری کے باعث اپنی پہچان رکھتی ہیں بلکہ پاکستانی ان کے لباس کی بھی خوب تعریف کرتے ہیں لیکن اب کی بار ایسا نہیں ہوا۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔کراچی کے ایک گیراج نے فاطمہ جناح کے زیر استعمال اس گاڑی کو ٹھیک کرنے کا فیصلہ کیا، دو سال کی محنت کے بعد اب یہ کار کیسی نظر آتی ہے؟ دیکھ کر آپ بے اختیار داد دینے پر مجبور ہو جائیں گے 

صباءقمر نے ہالی ووڈ میں فلم ملنے کے بعد اپنی چند ایسی تصاویر ”ہاٹ“ کہہ کر شیئر کر دیں کہ پاکستانی ان کا لباس دیکھ کر ہی غصے سے آگ بگولہ ہو گئے اور انہیں ’بے غیرت، بے شرم‘ جیسے خطاب دیتے ہوئے ’جہنمی‘ قرار دیدیا گیا اور کہا گیا کہ جہنم آپ سے زیادہ ’ہاٹ‘ ہے۔

یہ تصاویر سامنے آنے کے بعد سوشل میڈیا صارفین کا غصہ آسمان چھونے لگا اور سب ہی اپنے دل کی بھڑاس نکالنے میں مصروف ہو گئے۔

ایک صارف نے لکھا ” جہنم کی گرمی سے خبردار۔۔۔ جب کولہوں پر چمٹی لگائی جائے گی تو برداشت کرنا بہت مشکل ہو گا“

ایک اور صارف نے لکھا ”میں نے ہمیشہ اسے مہذب اور ٹیلنٹڈ اداکارہ سمجھا ہے لیکن یہ کیا کر رہی ہے“

ایک صارف نے کہا ”15 سال پہلے جب کتابوں میں قیامت کی نشانیاں پڑھتی تھی تو میں یہ تصور بھی نہیں کر سکتی تھی کہ ہماری آنکھیں سرعام اس بے حیائی کو دیکھیں گی۔ استغفراللہ۔۔۔ لعنت ہے اس پر“

ایک صارف نے لکھا ”یہی مسئلہ ہے، تھوڑی سی مشہور ہو جائیں اور اچھے کام کر لوگ ان کی تعریف کر دیں تو یہ فوراً اپنے آپے سے باہر ہو جاتے ہیں۔ مجھے اس پر پچھتاوا ہے کہ میں اسے اور بہت سی دیگر اداکاراﺅں کو اچھی اداکاری کے باعث پسند کرتا ہوں لیکن ان سب نے ایسی حرکتوں سے مجھے بہت مایوس کیا۔ انہیں یہ سمجھ نہیں آتی کہ مداح ان کے جسم کو نہیں بلکہ ان کی اداکاری کو پسند کرتے ہیں“

ایک صارف نے لکھا ”مر گیا ہے اس کا ضمیر، سوچ، فکر۔۔۔ ان کی آنکھوں پر پردے ہیں اور عقل پر بھی پردے ہیں کہ آیا کہ ہمارا تعلق کس مذہب سے ہے اور ہم کیا کر رہی ہیں۔۔۔ افسوس ہوتا ہے ان کی ماڈرن سوچ پر“

ایک اور صارف نے لکھا ”بھائی اسلامی جمہوریہ پاکستان کا نام بدل کر ری پبلک آف پاکستان رکھ دو کیونکہ یہاں لوگ ننگے ہوتے جا رہے ہیں دن بدن“

ایک صارف نے کہا ”ایسے شوٹ کیوں کروا رہی ہے صباءقمر ، آپ تو پہلے ہی اچھی اداکاری کرتی ہیں اور اس وجہ سے شہرت بھی ہے آپ کے پاس، تو پھر ایسے فوٹوشوٹ کیوں؟؟؟“

ایک صارف نے لکھا ”اپنی شہرت خود ہی خراب کر رہی ہے“

ایک اور صارف نے لکھا ”ہاں یہ اتنی ہاٹ ہے کہ برداشت نہیں ہو رہی، کوئی اس پر ٹھنڈے پانی کی بالٹی انڈیل دے“

ایک صارف کا کہنا تھا ”جہنم یہ سب برداشت کر سکتی ہے بھائی۔۔۔ اس کیلئے یہ زیادہ ہاٹ نہیں ہے“

ایک اور صارف کا کہنا تھا ”شوٹ کیلئے آتے ہوئے راستے میں بے چاری کو کتے پڑ گئے تھے ، اس لئے یہ حال ہوا ہے“

ایک صارف نے کہا ”چیف جسٹس کو اس کا نوٹس لینا چاہئے“

ایک صارف نے حکومت کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے لکھا ”سب حکومت کا قصور ہے، کوئی چیک اینڈ بیلنس نہیں ہے“

ایک صارف نے لکھا ”اس کی فیملی پر ترس آ رہا ہے۔۔۔ معاشرے کو بھی شرم آنی چاہئے!“

ایک صارف نے جانوروں کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا ”میں نے دیکھا ہے کہ جانور کپڑوں کے بغیر زیادہ خوبصورت لگتے ہیں“

ایک اور صارف نے لکھا ” لیکن جہنم کہیں زیادہ گرم ہے جو برداشت نہیں ہو گی“

ایک صارف کا کہنا تھا ”دیکھو شرم کی وجہ سے ناف فوٹو شوٹ میں نہیں دکھائی“

ایک اور صارف نے جانوروں کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا ”نیم برہنہ کا مطلب ہے فیشن اور خوبصورت۔ جانور تم سے زیادہ خوبصورت ہیں“

ایک صارف نے تمام حدیں پار کرتے ہوئے لکھا ”یہ ہاٹ نہیں، بے غیرت اور بے شرم ہے۔۔۔ جب تم بے شرم ہو جاﺅ تو پھر چاہے جو مرضی کرو“

ایک اور صارف نے لکھا ”لعنت ہے ایسی ہاٹنس پر۔۔۔ اللہ بچائے ایسے لباس سے۔۔۔ آمین“

ایک صارف نے کہا ”دوزخ کی آگ تمہاری برداشت سے کہیں زیادہ گرم ہو گی“

لیک صارف تو کچھ زیادہ ہی مایوس نظر آیا جس نے لکھا ”ایک ہی فیورٹ لڑکی تھی وہ بھی برہنہ ہو گئی، بات ختم“

ایک اور صارف نے استغفار پڑھا اور لکھا ”استغفار!!! کیا یہ اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے؟؟؟“

ایک صارف نے لکھا ”یہ کیا بکواس ہے۔۔۔ پھر کل کو یہ منہ اٹھا کر کہیں گی ’می ٹو‘۔۔۔ مجھے بھی جنسی طور پر ہراساں کیا گیا۔۔۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /تفریح