سوات،رمضان المبارک میں گراں فروشوں نے آستین چڑھادیں

سوات،رمضان المبارک میں گراں فروشوں نے آستین چڑھادیں

سوات (بیورو رپورٹ)سوات میں مہنگائی کی سونامی بے قابو،اشیائے خوردو نوش کی من مانے اور خودساختہ ریٹس نے روزہ داروں کی چیخیں نکال دی،قصائی سب پہ بھاری،370 روپے کلو کا گوشت 500 روپے فروخت کرنے لگیں،فروٹس تو غریب عوام کی دسترس سے باہر،سبزی کھا نا بھی عوام کیلئے خواب بن گیا،کمشنر ملاکنڈ اور ڈی سی سوات کے فوٹو سیشن کیلئے دورے،روزہ دار روکھی سوکھی کھانے پر مجبور،ایک سروئے کے مطابق مینگورہ شہر سمیت ضلع بھر میں مہنگائی کا جن بے قابو ہوگیا ہے اور مہنگائی کا سونامی غریب عوام کے خواب بھی چکنا چور کر گئے ہیں اور مینگورہ شہر میں اشیائے خورد ونوش کی من مانے اور خود ساختہ ریٹس نے روزہ داروں کی چیخیں نکال دی ہے جس میں قصائی بازی لیتے ہوئے سرکاری نرخ نامے سے تجاوز کر رہے ہیں اور سرکاری نرخ 370 روپے کے بجائے پانچ سو روپے فی کلو گوشت جبکہ ساڑھے سات سو روپے بغیر ہڈی کا گوشت فروخت کر رہے ہیں،فروٹس اور سبزی کی قیمتیں بھی اسمان سے باتیں کر رہی ہے اور شہر میں ٹماٹر 60 روپے کے بجائے ایک سو روپے کلو،الو 40 کے بجائے60.70 روپے،خشک پیاز 65 روپے کے بجائے سو روپے،کھیرا 35 کے بجائے60 روپے،لہسن 35 روپے کے بجائے 60 روپے،لیمو ں چار سو روپے کے بجائے پانچ سو روپے،اسی طرح فروٹس کھانا تو عوام کیلئے خواب بن گیا ہے اور فروٹس کے بھی من مانے اور خودساختہ ریٹس مقرر کئے گئے ہیں جس میں سیب کا سرکاری نرخ 250 ہے جبکہ مارکیٹ میں چار سو روپے فی کلو فروخت ہو رہا ہے اسطرح کیلا 60 روپے کے بجائے 120 روپے فی درجن جبکہ بڑا کیلا 200 روپے فی درجن،خربوز 30 روپے کے بجائے40 روپے فروخت ہو رہا ہے جبکہ انتظامیہ نرخوں کو کنٹرول کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے اور غریب عوام کا کوئی پرسان حال نہیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر /علاقائی