پنجاب میں 1224منصوبوں کیلئے 40ارب مختص، ایک پائی خرچ نہ ہوئی

  پنجاب میں 1224منصوبوں کیلئے 40ارب مختص، ایک پائی خرچ نہ ہوئی

  

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) پی اینڈ ڈی بورڈ نے رواں مالی سال میں جاری منصوبوں کے مکمل نہ ہونے پر رپورٹ تیار کرلی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ صوبہ میں 40 ارب روپے مالیت کے 1224 منصوبوں پر ایک پائی بھی خرچ نہیں ہوسکی جبکہ پنجاب میں 10 ارب روپے مالیت کے 56 منصوبوں پر منظوری ہی نہ دی جا سکی، 11 ارب روپے مالیت کے 489 منصوبوں پر فنڈز کا اجرا ہی نہیں کیا گیا۔رپورٹ کے مطابق پنجاب میں 18 ارب روپے سے زائد مالیت کے 679 منصوبوں پر فنڈز جاری ہونے کے باوجود استعمال نہ ہو سکے۔ محکمہ زراعت کے 1 ارب روپے مالیت کے 11 منصوبے جبکہ محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کئیر کے 1 ارب 20 کروڑ مالیت کے 39 منصوبے ادھورے پڑے ہیں۔اس کے علاوہ گورننس اینڈ آئی کے 1 ارب چھ کروڑ روپے مالیت 17 منصوبے، محکمہ بلدیات کے 95 کروڑ روپے مالیت کے 86 منصوبے، محکمہ صنعت وتجارت کے 83 کروڑ روپے مالیت کے 9 منصوبے، محکمہ لائیو سٹاک کے 78 کروڑ روپے مالیت کے 11 منصوبے، محکمہ سوشل ویلفئیر کے 43 کروڑ روپے مالیت کے 9 منصوبے، محکمہ انسانی حقوق کے 43 کروڑ روپے مالیت کے 55 منصوبے جبکہ محکمہ جنگلات، وائلڈ لائف اور ماہی پروری کے 33 کروڑ روپے مالیت 6 منصوبے ملتوی ہو گئے ہیں۔خواتین کی ترقی کے لئے 32 کروڑ روپے مالیت کے 4 منصوبے، محکمہ خوراک کے 30 کروڑ روپے مالیت کے 5 منصوبے، ایمرجنسی سروسز کے 27 کروڑ روپے مالیت کے 14 منصوبے، محکمہ ماحولیات کے 21 کروڑ روپے مالیت کے 5 منصوبوں پر ایک پائی بھی خرچ نہیں ہو سکی۔محکمہ معدنیات کے 20 کروڑ روپے مالیت کے 6 منصوبوں، محکمہ اوقاف اور مذہبی امور کے 19 کروڑ روپے مالیت کے 11 منصوبوں، محکمہ ٹرانسپورٹ کے 19 کروڑ روپے مالیت کے 4 منصوبوں، محکمہ بہبود آبادی کے 18 کروڑ روپے مالیت کے 6 منصوبے بھی ادھورے ہیں۔انفارمیشن اینڈ کلچر کے 8 کروڑ روپے مالیت کے 4 منصوبے، محکمہ سپیشل ایجوکیشن کے 7 کروڑ روپے مالیت کے 8 منصوبے اور محکمہ لٹریسی میں 7 کروڑ روپے مالیت کے 2 منصوبوں پر بھی 1 پائی خرچ نہ ہو سکی۔

پنجاب منصوبے

مزید :

صفحہ آخر -