صوابی،مصطفی کمال ایڈوکیٹ کو قتل کرنے والے 8 گرفتار،اسلحہ اور نقدی برآمد

صوابی،مصطفی کمال ایڈوکیٹ کو قتل کرنے والے 8 گرفتار،اسلحہ اور نقدی برآمد

  

صوابی(بیورورپورٹ) صوابی پولیس نے ایک کامیاب کارروائی کے دوران ممتاز قانون دان مصطفی کمال ایڈوکیٹ کے خاندان کے چھ افراد کے قتل و سات زخمی کرنے کے آٹھ ملزمان کو اسلحہ، موٹر سائیکل اور لاکھوں روپے نقدی سمیت گرفتار کر لیا۔ گرفتار ہونے والے ملزمان میں ایک افغان مہاجر بھی شامل ہیں۔ ڈی پی او صوابی عمران شاہد نے جمعہ کو اپنے دفتر میں ہنگامی پریس کانفرنس میں بتایا کہ موضع کڈی میں 2016سے مصطفی کمال ایڈوکیٹ اور عبدالعزیز حال سنگا پور کے مابین قتل مقاتلے کی دشمنی چلی آرہی تھی اس دوران عبدالعزیز سکنہ کڈی حال سنگا پور وہاں سے پیسوں کا انتظام کر کے اجرتی قاتلوں کے ذریعے مصطفی کمال ایڈوکیٹ کے خاندان کے افراد کو قتل کر رہے تھے اس دوران مصطفی کمال ایڈوکیٹ کے بھائیوں اور بھتیجوں سمیت دیگر چھ رشتہ دار جاں بحق جب کہ سات زخمی ہو چکے ہیں۔ پولیس اس اندھے قتل کو مسلسل ٹریس کر رہے تھے مگر ان کو ناکامی کا سامناکرنا پڑ رہا تھا پندرہ مارچ کو مصطفی کمال ایڈوکیٹ کے ایک بھائی محمد اقبال اور بھتیجے محمد اقبال زیدہ بازار میں موٹر سائیکل پر جارہے تھے کہ راستے میں تاک میں بیٹھے اجرتی قاتلوں نے ان پر اندھا دھند فائرنگ شروع کر دی جس کے نتیجے میں محمد اقبال خان جاں بحق جب کہ ان کا بیٹا منور اقبال شدید زخمی ہوئے۔ ڈی پی او عمران شاہد نے بتایا کہ اس اندھے قتل کو ٹریس کرنے کے لئے ایس پی انوسٹی گیشن بنارس خان کی سر براہی میں ڈی ایس پی احسان شاہ، ڈی ایس پی انوسٹی گیشن ظریف خان، ایس ایچ او تھانہ زیدہ راز محمد خان، سب انسپکٹر تفتیشی آفیسر سبحان اللہ خان پر مشتمل ایک خصوصی ٹیم تشکیل دی گئی جنہوں نے دن رات جدوجہد کر کے جدید سائنسی خطوط پر اس اہم ترین کیس کو ٹریس کر لیا۔ اور پولیس نے آٹھ ملزمان شیر محمد ولد صالح محمد سکنہ افغانستان حال ٹوپی جس کے قبضے سے تیس بور کارتوس،125سی سی موٹر سائیکل اور اجرت کی رقم مبلغ 5لاکھ روپے بر آمد کرنے کے علاوہ راحیل آفتاب ولد عبدالوحید سکنہ کوٹھا کے قبضے سے ایک عدد کلاشنکوف، محمد عدنان ولد سردار سکنہ ٹوپی سے ایک عدد تیس بور پستول بر آمد کرنے کے علاوہ قمر آفتاب ولد امیر محمد عرف میرو سکنہ ٹوپی، امین خان ولد نظر رحمان سکنہ کوٹھا، مظہر زمان عرف طورے ولد حبیب جمال سکنہ ٹوپی، امجد نواز ولد شیر نواز سکنہ کوٹھا اور فواد ولد مرزا محمد سکنہ کوٹھا کو گرفتار کر لیا۔ تمام آٹھ گرفتار ملزمان نے دوران تفتیش اعتراف جرم کر لیا۔ ڈی پی او عمران شاہد نے بتایا کہ ایک خاندان سے تیرہ افراد کو قتل و زخمی کرنے کا یہ کیس پولیس کے لئے ایک چیلنج تھا لیکن پولیس نے دن رات محنت کر کے نہ صرف اس اندھے کیس کو ٹریس کر لیا بلکہ اس میں ملوث تمام آٹھ ملزمان کو بھی گرفتار کر لیا۔ اور مرکزی ملزم عبدالعزیز کو سنگا پور سے لانے کے لئے انٹر پول سے رابطے میں ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -