بھارت پاکستان پر دراندازی کے بے بنیاد الزامات لگا کر کیا کرناچاہتا ہے؟شاہ محمود قریشی نے مودی سرکار کے مکروہ عزائم بے نقاب کر دیئے

بھارت پاکستان پر دراندازی کے بے بنیاد الزامات لگا کر کیا کرناچاہتا ہے؟شاہ ...
بھارت پاکستان پر دراندازی کے بے بنیاد الزامات لگا کر کیا کرناچاہتا ہے؟شاہ محمود قریشی نے مودی سرکار کے مکروہ عزائم بے نقاب کر دیئے

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھارت پاکستان پر دراندازی کرنے اور کشمیر میں دہشت گردانہ کارروائیوں کے بے بنیاد الزامات لگا کر دنیا کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش کر رہا ہے ، دراصل بھارت، فالس فلیگ آپریشن کے بہانے تلاش کر رہا ہے،بلوچستان میں شرپسند اور امن مخالف گروہوں کی بھارتی پشت پناہی آج کسی سے ڈھکی چھپی نہیں،بلوچستان میں پائی جانے والی بیرونی مداخلت کو روکنے کیلئے اور ان ہاتھوں کو بے نقاب کرنے کیلئےہمیں ایک مرتبہ پھراتفاق رائےپیداکرنا ہو گا،میں بلوچستان کی بلوچ اور پختون قیادت کو وزارت خارجہ آنے کی دعوت دیتا ہوں،اگر بلوچستان کے قائدین چاہیں گے تو میں کوئٹہ جانے کیلئے بھی تیارہوں، ایس سی او کا اجلاس بھی قریب ہے مجھے اگر وہاں موقع ملا تو میں وہاں بھی بھارتی رویے کے خلاف آواز اٹھاؤں گا ۔

وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے بھارتی عزائم کے حوالے سے بیان میں کہا کہ پاکستان دنیا کے تمام اہم فورمز پر بھارت کے عزائم کو بے نقاب کر چکا ہے، ہم سیکیورٹی کونسل، اقوام متحدہ، پی5کےنمائندگان کو وقتا فوقتا بھارتی منفی عزائم کے حوالے سے مفصل بریف کر چکے ہیں، بھارت پاکستان پر دراندازی کرنے اور کشمیر میں دہشت گردانہ کارروائیوں کےبےبنیاد الزامات لگاکردنیا کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش کررہاہے،دراصل بھارت،فالس فلیگ آپریشن کے بہانے تلاش کررہاہے،کشمیر میں اس وقت جو صورتحال ہے وہ بھارت کی اپنی پیداکردہ ہے،نوماہ سےنہتےکشمیری بھارتی کرفیوکا سامنا کررہےہیں،دنیایہ توقع کررہی تھی کہ شایدکرونا کی وجہ سےہندوستان کے رویے میں تبدیلی آئے گی مگر بدقسمتی سے ایسا نہیں ہوا،اب ہندوستان میں مقبوضہ کشمیر کے اندرایک پرامن تحریک جنم لے چکی ہے،وہ لوگ جو پہلے بھارت کےساتھ حکومت میں شامل تھے،آج دوسری جانب کھڑے دکھائی دیتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان میں شرپسند اور امن مخالف گروہوں کی بھارتی پشت پناہی آج کسی سے ڈھکی چھپی نہیں، ایک دن کھلے عام میڈیا پر پاکستان کو دھمکیاں دی جاتی ہیں اور اگلے روز بلوچستان میں ہمارے سیکیورٹی فورسز کے نوجوان شہید کیے جاتے ہیں، بھارت کے خلاف کشمیریوں میں پایا جانے والا غم و غصہ فطری ہے، بھارت نے جس طرح کشمیر کو تین حصوں میں تقسیم کیا اور اس کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کی کوشش کی ہے، اس سے نہ صرف کشمیری مسلمان بلکہ کشمیری پنڈت اور دیگر اقلیتیں بھی ناخوش ہیں، مقبوضہ جموں و کشمیر کے حوالے سے الحمدللہ تمام سیاسی پارٹیوں میں اتفاق رائے پایا جاتا ہے، ایک سے زیادہ مرتبہ متفقہ طور پر پارلیمنٹ میں قراردادیں منظور ہو چکی ہیں، بلوچستان میں پائی جانے والی بیرونی مداخلت کو روکنے کیلئے اور ان ہاتھوں کو بے نقاب کرنے کیلئے ہمیں ایک مرتبہ پھر اتفاق رائے پیدا کرنا ہو گا۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں بلوچستان کی بلوچ قیادت اور پختون قیادت کو وزارت خارجہ آنے کی دعوت دیتا ہوں، اگر بلوچستان کے قایدین چاہیں گے تو میں کوئٹہ جانے کیلئے بھی تیار ہوں، آج بھارت کا چہرہ بے نقاب کرنے کی ضرورت ہے بھارت سرکار کشمیریوں سے اس قدر خائف ہے کہ جب وہ گھروں میں گھس کر تشدد کرتے ہیں اور نوجوانوں کو اغوا کرتے ہیں تو ان کی لاشیں بھی واپس نہیں کرتے، اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے واضح کہا کہ کرونا کی وبا اس قدر تشویشناک ہے کہ جنگ زدہ علاقوں میں فوری طور پر جنگ بندی کا نفاذ ہونا چاہیے لیکن یہاں معاملہ برعکس ہے صرف اپریل کے مہینے میں لاین آف کنٹرول کی خلاف ورزیوں میں 36 شہادتیں ہو چکی ہیں، آج بھارت کے اندر مسلمانوں کو کرونا وائرس کے پھیلاؤ کا موجب قرار دیا جا رہا ہے، اسلام کے خلاف ایک نفرت آمیز رویہ اپنایا جا رہا ہے، میں اس ساری صورتحال پر بذریعہ خط سیکرٹری جنرل او آئی سی اور او آئی سی ممبر ممالک کے تمام وزرائے خارجہ کو مطلع کر چکا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ ایس سی او کا اجلاس بھی قریب ہے، مجھے اگر وہاں موقع ملا تو میں وہاں بھی بھارتی رویے کے خلاف آواز اٹھاؤں گا، میں ان سے پوچھوں گا کہ کیا پاکستان کے کہنے پر انہوں نے سیٹیزن ترمیمی بل کا نفاذ کیا تھا؟ کیا پاکستان نے این آر سی کے نفاذ کی تجویز دی تھی؟آج دنیا نے دہلی میں جو منظر نامہ دیکھا جس کے خلاف دنیا بھر کی اقلیتیں سراپا احتجاج ہیں تو کیا پاکستان کو اس کا مورد الزام ٹھہرایا جائے؟بھارت نے اپنی پالیسیوں اور ہندتوا سوچ کے ذریعے لوگوں کو خود سے متنفر کیا ہے پھر تشدد کے ذریعے انہیں کچلنے کی کوشش کی ہے، بھارت نے دنیا میں پاکستان کو بدنام کرنے کی کوشش کی لیکن کارگر نہ ہوئی، ہماری مسلح افواج نے، ہمارے سیکیورٹی فورسز نے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کر کے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کامیابی حاصل کی، پاکستان نے افغانستان میں دیرپا قیام امن کیلئے جو مصالحانہ کردار پاکستان نے ادا کیا آج پوری دنیا اسے سراہ رہی ہے۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -