حکومت کی جانب سے لاک ڈاون میں نرمی پر ڈاکٹرز بھی میدان میں آگئے

حکومت کی جانب سے لاک ڈاون میں نرمی پر ڈاکٹرز بھی میدان میں آگئے
حکومت کی جانب سے لاک ڈاون میں نرمی پر ڈاکٹرز بھی میدان میں آگئے

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن ) ڈاکٹروں نے لاک ڈاو¿ن نرم کرنے کی پھر مخالفت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اقدامات کیے بغیر لاک ڈاون میں نرمی سے کورونا وبا مزید پھیلے گی۔پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے عہدیداروں نے کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ اگر لاک ڈاون نرم ہی کرنا ہے تو پھر عملہ اور وینٹلیٹرز بھی بڑھائیں، ورنہ صورتحال خراب ہوجائے گی۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر اکرام نے کہا کہ لاک ڈاوَن نرم کرنے کا مطلب دروازے کھولنا ہے۔ موجودہ لاک ڈاوَن سے مطمئن نہیں ہیں، نرمی ہو گی تو نجانے کیا ہوگا۔ لاک ڈاون کی وجہ سے ہماری نظر میں کوئی ایک بندہ بھی بھوک سے نہیں مرا ہے۔پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈاکٹر قیصر سجاد کا کہنا تھا کہ پنجاب اور سندھ کے لیے ایک سسٹم ہونا چاہیے۔ اگر نرمی کرنی ہے تو ہیلتھ کا انفراسٹرکچر بہتر کیا جائے۔

پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈاکٹرز کا کہنا تھا کہ کورونا سے کئی ڈاکٹرز بھی متاثر ہوئے ہیں۔ لیکن صوبائی یا وفاقی حکومت کا کوئی نمائندہ ان کی داد رسی کے لیے نہیں گیا۔ڈاکتروں نے حکومت سے مارکٹس کھولنے کے اعلان پر نظر ثانی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ سماجی فاصلہ ہی اس وبا کا علاج ہے۔ ترقی یافتہ ممالک بھی کورونا کا علاج نہیں نکال سکے ہیں۔ڈاکٹروں کا کہنا ہے تھا کہ لوکل ٹرانسمیشن کیسز کی تعداد بڑھ رہی ہے۔ مشین تو فراہم کر دی گئی ہے لیکن کٹس نہیں دی گئی ہیں۔

مزید :

قومی -