قبلہ اول تک رسائی میں سہولت کیلئے نئی صہیونی سازش بے نقاب

قبلہ اول تک رسائی میں سہولت کیلئے نئی صہیونی سازش بے نقاب

مقبوضہ بیت المقدس(اے این این)صہیونی ریاست نے یہودی آباد کاروں کی قبلہ اول تک رسائی آسان بنانے کیلئے ایک نئی سازش تیار کرنا شروع کی ہے۔ اسرائیلی میڈیا رپورٹس کے مطابق حکومت مسجد اقصی کے قریب ایک نئی عمارت کی تعمیر کرنا چاہتی ہے جس کی تکمیل کے بعد یہودیوں کو مسجد اقصی کے اندر تک پہنچنے میں ایک نیا راستہ مل جائے گا۔ اسرائیلی حکومت مسجد کے قریب ایک نئی عمارت کا افتتاح کرے گی جس کی تکمیل کے بعد مسجد اقصی اور دیوار براق تک یہودیوں کی رسائی مزید آسان ہوجائے گی۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل کے مذہبی انتہا پسند یہودی حلقوں کی طرف سے یہودی لیڈر شموئل رابینوفیٹچ پر کڑی نکتہ چینی کی اور الزام عائد کیا ہے کہ مسٹر رابینو فیٹچ مذکورہ عمارت کی جگہ اور اس کا نقشہ تبدیل کرنا چاہتے ہیں۔ مسجد اقصی کے قریب ایک نئی عمارت کی تعمیر کے منتظمین اور یہودی آباد کاروں کو یہ توقع ہے کہ اس عمارت کی تکمیل کے بعد مسجد اقصی پر دھاوے بولنے والوں کو دھوپ اور بارش سے بچایا جا سکے گا۔ اس طرح پولیس اور یہودی آباد کاروں دونوں کو مسجد اقصی پر یہودیوں کے دھاووں کے دوران سکون ملے گا۔دوسری جانب اسرائیلی پولیس کا کہنا ہے کہ یہودی آباد کاروں کے جبل ہیکل (مسجد اقصی)میں داخل ہونے سے قبل یہودیوں کی تلاش لینے کا عمل ان کیلئے مشکلات پیدا کرر رہا ہے مگر نئی عمارت کی تکمیل کے بعد پولیس کو یہودی آباد کاروں کی تلاشی لینے میں آسانی ہوجائے گی۔ اس طرح یہودی آباد کاروں کی بھی وقت کی بچت ہوگی اور پولیس کو بھی زیادہ پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا۔

مزید : عالمی منظر