وفاقی محتسب کو خاتون افسر کو ہراساں کرنے کی انکوائری سے روک دیا گیا

وفاقی محتسب کو خاتون افسر کو ہراساں کرنے کی انکوائری سے روک دیا گیا

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے وفاقی محتسب کو ریسکیو ایمرجنسی سروسز کے ترجمان جام سجاد حسین کے خلاف خاتون افسر کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کی انکوائری کرنے سے روک دیا، عدالت نے ترجمان ریسکیو کی طلبی کے نوٹس معطل کرتے ہوئے وفاقی محتسب سے تین ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔مسٹر جسٹس شمس محمود مرزا نے ترجمان ریسکیو ایمرجنسی سروسز جام سجاد حسین کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے چودھری شعیب سلیم ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ وفاقی محتسب ریسکیو افسر کے خلاف خاتون کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف انکوائری کر رہی ہے، خاتون کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کی پہلے ہی محکمانہ انکوائری ہو رہی ہے، قانون کے مطابق ایک ہی الزام کی دو مختلف فورمز پر انکوائریاں نہیں ہو سکتیں، قانون کی روشنی میں وفاقی محتسب پہلی انکوائری کے فیصلے پر اپیل کی سماعت کا اختیار رکھتی ہیں جبکہ براہ راست انکوئری کا اختیار وفاقی محتسب کو حاصل نہیں ہے، انہوں نے استدعا کی کہ عدالت وفاقی محتسب کو ریسکیو افسر کے خلاف انکوائری روکنے کا حکم دے ، عدالت نے سماعت ملتوی کرتے ہوئے وفاقی محتسب کو 3 ہفتوں میں تفصیلی جواب بھی داخل کرانے کا حکم دے دیا اور انکوائری کرنے سے بھی روک دیاہے۔

مزید : علاقائی


loading...