شانگلہ،پیڈو،سرحد رورل سپورٹ پروگرام کے زیر نگرانی چھوٹے پن بجلی گھر نا کامی سے دوچار

شانگلہ،پیڈو،سرحد رورل سپورٹ پروگرام کے زیر نگرانی چھوٹے پن بجلی گھر نا کامی ...

  



الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر)شانگلہ میں صوبائی حکومت۔ پیڈو۔سرحد رورل سپورٹ پروگرام کے زیر نگرانی لاکھوں روپے مالیت کے چھوٹے پن بجلی گھر منصوبے ناکامی سے دوچارہوگئی،منصوبوں میں غیر معمولی تاخیرناقص مٹریل کا استعمال کا انکشاف،بارشوں کے بعد نئے بننے والے پن بجلی گھروں کے واٹر چینل اور واٹر ٹینک پھٹ پڑے۔لاکھوں روپے پانی کے نذر۔صوبائی حکومت کے چھوٹے پن بجلی گھر منصوبے ناکام کرنے کی کوشش۔دو سال گزرنے کے باوجود بھی پیڈوصوبائی حکومت اور مالکان کے درمیان معاہدہ نہ ہوسکا۔ صوبائی حکومت کی سستی بجلی پروگرام کی آڑ میں عوام لٹنا شروع ۔مالکان نے صوبائی ملکیت کو اپنا سمجھ کر نئے کنکشن لگانے والوں سے پانچ ہزار روپے ایڈوانس اور دس روپے فی یونٹ لے رہے ہیں عوام کا کوئی پرسان حال نہیں ہیں شانگلہ کے علاقوں پورن ۔مخوزی۔ لیلونئی ۔الپوری۔ماچاڑ۔کانا ۔شاہ پور۔ شنگ اور دیگر علاقوں میں حکومت خیبرپختونخوا کی مقامی خوروں سے چھوٹے پن بجلی گھروں سے سستی بجلی پیدا کرنے کے دعوے دھرے کے دھرے۔عوامی حلقوں میں شدید بے چینی کی لہر دوڑ گئی۔وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک۔صوبائی وزیر پور اینڈ انرجی عاطف خان سے مالکان اورایس ار ایس پی کے خلاف تحقیقات کرنے کا مطالبہ۔ ضلع شانگلہ میں اب تک چھوٹے پن بجلی گھرکچھ تیارہوکر چالو ہوچکے ہیں اور بعض پن بجلی گھر انجینئرز کی غلط پانی فزیبلٹی رپوٹ کی وجہ سے تعطل کا شکا رہیں ،دو سال گزرنے کے باوجود منصوبہ پایہ تکمیل تک نہ پہنچ پایاجہاں پرپانی زیادہ ہو اور زیادہ وولٹیج جرنیٹر کی ضرورت ہو تو وہاں کم ولٹیج جرینٹر نصب کردیا ہے اور جہاں پانی کم ہو تو وہاں پر زیادہ ولٹیج کے جرینٹر دئے ہیں جس کی وجہ سے ان چھوٹے پن بجلی گھرتیارہوکربھی بجلی پیدا نہیں کرتی اور جو منصوبے چار پانچ ماہ میں بن سکتے تھے ،وہ دو تین سال میں نہ بن پائے اور تعطل کا شکار ہیں جو ان انجینئرز کی نااہلی کو ظاہر کرتی ہے مقامی لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے عوامی حلقوں نے صوبہ خیبرپختونخوا کے وزیراعلیٰ پرویز خٹک ۔صوبائی وزیر پور اینڈ انرجی عاطف خان سے پیڈو۔ ایس ار ایس پی کے ذمہ داروں کے خلاف تحقیقات اور غفلت برتنے پر سزہ دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پانی کی مقدار کے مطابق جرینٹر مہیا کرکے ان منصوبوں کو مکمل کیا جائے،مزید تاخیر کی صورت میں احتجاج پر مجبور ہو جائیں گے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...