شانگلہ ،محکمہ زراعت میں باہر اضلاع سے بھرتی حق تلفی ہے ،عوامی حلقے

شانگلہ ،محکمہ زراعت میں باہر اضلاع سے بھرتی حق تلفی ہے ،عوامی حلقے

  



الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر)شانگلہ محکمہ زراعت سائل کنزر ویشن میں فیلڈ اسسٹنٹ سکیل 9کی پانچ آسامیوں پر باہر اضلاع سے بھرتی کرکے شانگلہ کے ٹرینڈاور اہل امیدواروں کی حق تلفی ہوئی ہے،میرٹ کی دھجیاں اڑائی گئی ہے۔ رولز ،قانون،پالیسی اوراشتہار، انصاف کو پامال کردیا گیا ہے۔امیدواران اور عوامی حلقوں کا شدید رد عمل۔ وزیر اعلیٰ سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔ضلع شانگلہ محکمہ زراعت میں خالی پانچ فیلڈ اسسٹنٹ کی آسامیوں پر بنوں ،کوہاٹ ،لکی مروت، شنکیاری سے بھرتی کئے جبکہ متعلقہ ضلع شانگلہ کو یکسر نظر انداز کیا گیا ۔انٹرویوں میں 25امیدواروں نے حصہ لیا جس میں ضلع شانگلہ کے چار امیدوار بھی شامل ہوئے۔لیکن ان کو یکسر نظرانداز کرکے باہر دور دراز کی اضلاع سے بھرتی کرکے یہاں کے اہل اور ٹرینڈامیدواروں کی حق تلفی ہوئی ہے سایل کنزروویشن میں تین فیلڈ اسسٹنٹ ڈی ائی خان سے تعلق رکھنے والوں کوبھرتی کئے حالانکہ اشتہار میں واضح طور پر لکھا گیا ہے کہ امیدوار متعلقہ ضلع کا ڈومسائل رکھتا ہو ۔نیز اشتہار میں واضح طور پر درج کیا گیا ہے کہ ان امیدواروں کو ترجیح دی جائیگی جو ضلع مالاکنڈ ، اپر دیر ، شانگلہ ، تور غر اور ہنگو سے کے ڈومیسائیل رکھتے ہو۔ محکمہ زراعت اور محکمہ سایل کنزرویشن نے باہر کے امیدواروں کو بھرتی کرکے شانگلہ کے تعلیم یافتہ اور ٹرینڈامیدواروں کا حق پر ڈاکہ ڈالاہے۔ جبکہ پالیسی کے تحت سکیل 1تا 10تک بھرتیاں ضلعی سطح پر متعلقہ ڈسٹرکٹ افسر،ڈپٹی کمشنر،سیکشن افسریا اس کے نمائندہ کرتے ہیں۔شانگلہ کے ساتھ مختلف ادوار میں ناانصافی ہورہی ہے ان امیدواروں کا کہنا تھا کہ محکمہ زراعت میں تین سال تک ٹریننگ حاصل کیا ہے اور اب اوورایج ہو رہے ہیں ہمارا کوئی پرسان حال نہیں ہے شانگلہ سے منتخب نمائندوں نے بھی چپ سادھ لی ہوئی ہے شانگلہ کے تعلیم یافتہ نوجوانوں کے ساتھ سراسر ظلم اور ناانصافی ہو رہی ہے امیدواروں اور عوامی حلقوں نے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...