تبادلے و تقرریاں ،سندھ پولیس کے ایماندار افسران کو سائیڈ لائن کر دیا گیا

تبادلے و تقرریاں ،سندھ پولیس کے ایماندار افسران کو سائیڈ لائن کر دیا گیا

کراچی (رپورٹ /ندیم آرائیں )منشیات فروشوں اور سنگین جرائم میں ملوث دیگر گروہ کے خلاف بلاتفریق کارروائی ایماندار پولیس افسر کو راس نہیں آئی ۔ایس ایس پی غربی ڈاکٹررضوان کو اے آئی جی ویلفیئر تعینات کرنے کے بعد ضلع بھر میں جرائم پیشہ افراد میں خوشی کی لہر دوڑگئی اور انہوں نے باقاعدہ ایک دوسرے کو مبارکباد کے پیغامات بھی ارسال کیے ہیں ۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ چند روز کے دوران سندھ پولیس میں اعلیٰ افسران کے تبادلے و تقرریاں کی گئی ہیں جس کی زد میں ایسے پولیس افسران بھی آئے ہیں جنہوں نے اپنے تعیناتی کے مقام پر جرائم پیشہ عناصر کو نکیل ڈال کر رکھی تھی ۔ایس ایس پی سینٹرل کے بعد ایس ایس پی ویسٹ تعینات ہونے والے ڈاکٹررضوان سے نہ صرف جرائم پیشہ عناصربلکہ محکمہ پولیس کے کرپٹ افسران و اہلکاروں کی جان جاتی تھی۔ انہوں نے بحیثیت ایس ایس پی غربی اپنی تعیناتی کے دوران منشیات فروشوں ،قمار بازوں ،قحبہ خانوں اور دیگر مکروہ جرائم میں ملوث متعدد گروہوں کا خاتمہ کیا اور اسٹریٹ کرائم کے خاتمے کے لیے بھی موثر حکمت عملی کے ساتھ کیا جس سے ضلع غربی میں اسٹریٹ کرمنلز کی حوصلہ شکنی ہوئی اور ضلع میں جرائم کے گراف میں نمایاں کمی واقعی ہوئی تھی ۔ اسی طرح ڈاکٹر رضوان نے ڈسٹرکٹ سینٹرل اور ڈسٹرکٹ ویسٹ کے تمام تھانوں میں ایسے پولیس افسران و اہلکاروں کی لسٹ بناکر اعلیٰ افسران کو بھیجی جو گزشتہ کئی دہائیوں سے ایک ہی تھانے میں تعینات ہیں اور مختلف قسم کے آرگنائز جرائم میں ملوث ہیں ،انہوں نے کئی پولیس افسران و اہلکاروں کے تبادلے بھی کیے ، ایسے حالات میں جب ضلع کے عوام ایس ایس پی ڈاکٹررضوان کو اپنا نجات دہندہ سمجھ رہے تھے ان کا تبادلہ سمجھ سے بالاتر ہے ۔ذرائع کے مطابق ڈاکٹر رضوان کے تبادلے کی خبر سن کر جرائم پیشہ عناصر میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور انہوں نے باقاعدہ ایک دوسرے کو مبارکباد کے پیغامات بھی بھیجے ہیں ۔کرپٹ پولیس افسران و اہلکار وں نے بھی ایک دوسرے کو فون کرکے مبارکباد دی ۔ ڈاکٹر رضوان کو اب آپریشنل ڈیوٹی سے ہٹاکر اے آئی جی ویلفیئر تعینات کیا گیا ہے ۔اسی طرح ایس ایس پی سینٹرل عرفان بلوچ کو بھی سعید آباد ٹریننگ سینٹر میں تعینات کیا گیا ہے جبکہ ان کی اصل شہرت جرائم پیشہ عناصر کے خلاف دلیرانہ کارروائیوں سے ہے اور مختلف اضلاع میں بحیثیت ایس ایس پی تعیناتی انہوں نے قبضہ مافیا سمیت دیگر جرائم کے خلاف بھرپور کارروائیاں کیں ۔سابق ایس ایس پی ساؤتھ عمر شاہد حامد کو بھی سائیڈ لائن کردیاگیا ہے ۔اس ضمن میں پولیس حلقوں کا کہنا ہے کہ ایسے افسران جو میدان میں کھڑے رہ کر جرائم پیشہ عناصر کے خلاف کارروائیاں کرتے ہیں ان کو نان آپریشنل پوسٹنگز دینا نہ صرف ان کے ساتھ زیادتی ہے بلکہ یہ عوام کے ساتھ بھی ظلم کے مترادف ہے ۔ایسے افسران جو عوام اور پولیس کے درمیان پل کا کردار ادا کررہے ہیں ان کو آپریشنل ذمہ داریاں دیناانتہائی ضروری ہے ۔اس سے عوام اور پولیس کے درمیان دوریوں کا خاتمہ ہوگا اور جرائم کے خاتمے میں بھی مدد ملے گی ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر