اسلام آباد ہائیکورٹ، پاکستان میڈیکل کمیشن تقرری کیس، آسامی مشتہر کئے بغیر تعیناتی نہیں ہو گی: اٹارنی جنرل 

اسلام آباد ہائیکورٹ، پاکستان میڈیکل کمیشن تقرری کیس، آسامی مشتہر کئے بغیر ...

  



اسلام آباد (این این آئی)اسلام آباد ہائیکورٹ میں پی ایم ڈی سی کی تحلیل اور پاکستان میڈیکل کمیشن کے قیام کیخلاف درخواستوں پر سماعت کے دور ان اٹارنی جنرل انور منصور خان نے یقین دہانی کرائی ہے کہ آسامی مشتہر کیے بغیر کوئی تعیناتی نہیں کی جائے گی جبکہ عدالت عالیہ نے فریقین کو ایک ہفتے میں شق وار جواب جمع کرانے کی ہدایت کی ہے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے سماعت کی۔ بابر ستار ایڈووکیٹ نے کہاکہ وزارت صحت آ کر بتائے کہ 48 گھنٹے میں کیسے پی ایم ڈی سی تحلیل کر کے پی ایم سی کا قیام عمل میں لایا گیا؟۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میڈیکل کمیشن میں ممبران کی تقرریوں کو بھی چیلنج کیا گیا ہے، اخباری اشتہار کے بغیر اتنا سب کچھ ہو گیا ہے۔ دور ان سماعت اٹارنی جنرل انور منصور خان عدالت میں پیش ہوئے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میڈیکل کمیشن میں ملازمت کیلئے ابھی تک کوئی آسامی مشتہر ہی نہیں کی گئی۔ اٹارنی جنرل انور منصور نے یقین دہانی کرائی کہ آسامی مشتہر کیے بغیر کوئی تعیناتی نہیں کی جائے گی۔ وکیل درخواست گزار نے کہاکہ کمیشن بنانے پر بھی تو کوئی اشتہار نہیں دیا گیا تھا مگر ممبران کی تعیناتیاں کی گئیں۔ اٹارنی جنرل کی جانب سے جواب جمع کرانے کیلئے مزید وقت کی استدعا کی گئی۔ وکیل نے کہاکہ لاہور، کوئٹہ، کراچی اور پشاور ہائی کورٹ میں بھی درخواستیں دائر ہیں۔ وکیل درخواست گزار نے کہاکہ صدارتی آرڈیننس ایمرجنسی میں پاس کئے جاتے ہیں، صدر کے اس آرڈیننس میں پارلیمنٹ کو سائیڈ لائن کیا گیا، ایسی کوئی ایمرجنسی نہیں تھی کہ صدر آرڈیننس جاری کریں،مستقل ملازمین کو نوکریوں سے فارغ کردیا گیا۔فریقین کو ایک ہفتے میں شق وار جواب جمع کرانے کی ہدایت کے بعد سماعت آئندہ پیر 18 نومبر تک ملتوی کر دی گئی۔

میڈیکل کمیشن تقرری کیس

مزید : صفحہ اول


loading...