شاعرِ مشرق علامہ محمداقبال کا یومِ ولادت (9نومبر)

شاعرِ مشرق علامہ محمداقبال کا یومِ ولادت (9نومبر)
شاعرِ مشرق علامہ محمداقبال کا یومِ ولادت (9نومبر)

  

علامہ محمداقبال کا یومِ ولادت عقیدت و احترام سے منایا جا رہا ہے۔وہ 9نومبر 1877 ء کو سیالکوٹ میں پیدا ہوئے۔ آپ بیسویں صدی کے معروف شاعر، مصنف، قانون دان اور تحریکِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات میں سے ایک تھے۔ اردو اور فارسی زبان کے شاعر کی حیثیت سے دنیائے ادب میں ممتاز حیثیت کے حامل ہیں۔ ان کے کلام کا بنیادی رجحان تصوف اور احیائے امتِ مسلمہ ہے۔ان کی وفات 21اپریل 1938ٗٗء میں ہوئی۔

نمونۂ کلام

ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں 

مری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں 

ستم ہو کہ ہو وعدۂ بے حجابی 

کوئی بات صبر آزما چاہتا ہوں 

یہ جنت مبارک رہے زاہدوں کو 

کہ میں آپ کا سامنا چاہتا ہوں 

ذرا سا تو دل ہوں مگر شوخ اتنا 

وہی لن ترانی سنا چاہتا ہوں 

کوئی دم کا مہماں ہوں اے اہل محفل 

چراغ سحر ہوں بجھا چاہتا ہوں 

بھری بزم میں راز کی بات کہہ دی 

بڑا بے ادب ہوں سزا چاہتا ہوں 

شاعر: علامہ محمد اقبال

Tiray     Eshq   Ki   Intehaa   Chaahta   Hun

Miri   Saadgi   Daikh   Kaya   Chaahta   Hun

 Sitam   Ho   Keh   Ho   Waada-e-Be   Hijaabi

Koi   Baat   Sabr   Aazmaa   Chaahta   Hun

 Yeh   Jannat   Mubaarak   Rahay   Zaahidon   Ko

Keh   Main   Aap   Ka   Saamnaa   Chaahta   Hun

 Zaraa   Sa   To   Dil   Hun   Magar   Shokh   Itna

Wahi   Lan   Taraani   Sunaa   Chaahta   Hun

 Koi   Dam   Ka   Mehmaan   Hun   Ehl-e-Mehfill

Charaagh-e-Sahar   Hun   Bujhaa   Chaahta   Hun

 Bhari   Bazm   Men   Raaz   Ki   Baat   Keh   Di

Barra   Be    Adab   Hun   Sazaa   Chaahta   Hun

 Poet: Allama    Muhammad   Iqbal

 

مزید :

شاعری -