’’غاصبانہ قبضہ‘‘

’’غاصبانہ قبضہ‘‘
’’غاصبانہ قبضہ‘‘

  


مقبوضہ کشمیر میں برہان مظفر وانی کی شہادت کے بعد پیدا ہونے والے حالات نے پورے جنوبی ایشیا کو لپیٹ میں لے رکھا ہے۔ سرکاری سطح پر بھارت کی ہٹ دھرمی برقرار ہے، لیکن ایسی آوازیں اُٹھنے لگی ہیں، جن کی طرف سے دیوار کا لکھا پڑھنے پر زور دیا جا رہا ہے۔ ارون دھتی رائے نے یہ کہہ کر دریا کو کوزے میں بند کر دیا ہے کہ مسئلہ بھارت کی کشمیر سے آزادی کا ہے کہ وہ اس معاملے میں آزادانہ سوچنے کی صلاحیت سے محروم ہے۔ مقبوضہ کشمیر کا دورہ کرنے والے کئی بھارتی اخبار نویس بھی چیخ رہے ہیں۔ ایسی رپورٹیں چھپ رہی ہیں، جن میں حقائق کی عکاسی کی گئی ہے۔ بھارتی سپریم کورٹ کے ایک (سابق) جج اور پریس کونسل آف انڈیا کے (سابق) چیئرمین مرکنڈے کاٹجو نے معروف مجلے ’’آؤٹ لک‘‘ میں کھل کر لکھ ڈالا ہے: سچی بات یہی ہے کہ زیادہ تر کشمیری نوجوان برگشتہ ہو چکے ہیں۔ بھارت کے معاملے میں ان کا رویہ بڑا جارحانہ ہے۔ ایک فوج کسی دوسری فوج سے تو لڑ سکتی ہے، لیکن وہ عوام سے نہیں لڑ سکتی۔۔۔ ان کا کہنا ہے کہ انڈیا کے عوام، حکومت اور فوج کے سامنے اب یہ حقیقت کھل کر بیان کر دینی چاہئے کہ ایک بھرپور گوریلا جنگ کے امکانات تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ بھارتی میڈیاکے وہ اینکر جنہیں ڈان کوئکزوٹ، لارڈ ہاہا اور ڈاکٹر گوئبلز کہا جا سکتا ہے ہمیں گمراہ کر رہے ہیں۔کاٹجو صاحب لکھتے ہیں: یہ کہنا کہ تمام جنگجو سرحدپار سے آتے ہیں، حقیقت کے برعکس ہوگا ان کی ایک بڑی تعداد، برہان وانی کی طرح مقامی ہے۔ یہ درست ہے کہ تمام کشمیری نوجوان مسلح اور تربیت یافتہ شدت پسند نہیں ہیں۔ اس وقت ان کی تعداد بہت کم ہے، لیکن زیادہ تر کشمیری نوجوانوں کی ہمدردیاں ان کے ساتھ ہیں۔ وہ انہیں اطلاعات، خوراک اور محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہے ہیں۔ برہان وانی کے جنازے میں لاکھوں افراد کی شرکت نے یہ حقیقت واضح کر دی ہے۔ جسٹس کاٹجو کا یہ بھی کہنا ہے کہ جنگجوؤں کو چین اور پاکستان کی طرف سے ہتھیار فراہم کئے جا رہے ہیں ہم پاکستان سے ہتھیاروں کی فراہمی اگر رکوا لیں تو بھی چین کو کیسے روکا جا سکتا ہے؟ ہم اپنی ’’سرجیکل سٹرائیک‘‘ کی جتنی بڑھیں ہانکتے رہیں، اس سے کوئی مسئلہ حل نہیں ہو گا۔ کشمیر میں ہماری افواج پر حملے جاری رہیں گے، گوریلے، ضرب لگا کر، بھاگتے اور غائب ہوتے رہیں گے ،جس طرح کہ بارامولہ کیمپ میں ہوا۔ گوریلے کے پاس تحیرّ کا ہتھیار ہوتا ہے۔ وہ وقت، جگہ اور حملے کا دورانیہ خود طے کرتا ہے۔ اگر عوام کی تائید بھی اسے حاصل ہو تو وہ ناقابلِ تسخیر ہو جاتا ہے۔جیسا کہ فرانسیسیوں اور امریکیوں کے ساتھ ویت نام میں ہوا۔ انہوں نے تان یہاں توڑی ہے کہ مَیں کوئی ڈراؤنی تصویر نہیں کھینچ رہا، لیکن میرا یہ خیال ضرور ہے کہ تمام ہندوستانیوں کو سچ لازماً بتا دینا چاہیے۔

ایک منظر یہ ہے تو دوسری طرف پاکستان کی داخلی سیاست اپنی ترجیحات پر نظرثانی کرنے کو تیار نہیں ہے۔ تمام سیاسی جماعتوں نے کل جماعتی کانفرنس میں وزیراعظم نوازشریف کے زیر صدارت جمع ہو کر اہلِ کشمیر کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا اور مطالبہ کیا کہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیری عوام کو اپنی قسمت کا فیصلہ خود کرنے کا حق دیا جائے۔ یہاں تک تو سب خیریت تھی، لیکن جب پارلیمنٹ کا اجلاس طلب کیا گیا، تو تحریک انصاف نے اس میں شرکت سے نہ صرف کہ انکار کیا، بلکہ وزیراعظم نوازشریف سے استعفیٰ بھی طلب کرلیا۔ عمران خان کا کہنا ہے کہ اگر پاناما لیکس کی تحقیقات شروع نہ ہوئیں تو وزیراعظم کو حکومت کرنے نہیں دی جائے گی۔ انہوں نے اپنے حامیوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ 30اکتوبر کو اسلام آباد میں جمع ہوں۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس روز دارالحکومت بند کر دیا جائے گا اور اُس وقت تک وہاں سے کوچ نہیں ہوگا، جب تک حکومت گرانہ دی جائے ۔

پارلیمنٹ کے اجلاس میں پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ(ن) کے رہنماؤں نے ایک دوسرے کے خوب لتے لئے، وہ وہ کوسنے دیئے گئے کہ سننے والوں نے کانوں میں انگلیاں ٹھونس لیں۔ گڑھے مُردے اکھاڑنے میں کوئی پیچھے نہیں تھا۔ سینیٹر مشاہد اللہ اور اعتزازاحسن ایک دوسرے پر بازی لے جا رہے تھے۔ مسلم لیگ (ن) چونکہ برسراقتدار ہے، اِس لئے اس کے متعلقین سے تحمل اور برداشت کی توقع زیادہ قائم کی جاتی ہے۔ اس کے مشاہد اللہ جیسے جیالوں کو کون سمجھائے کہ بعض اوقات طرح دینا ہی بازی جیت لینے کے مترادف ہوتا ہے۔حکومت کے متعلقین کو جلتی پر تیل ڈالنے کے مقابلے میں شریک ہونا مہنگا پڑ سکتا ہے۔اپوزیشن کے لہجے کو اپنانا اس کی نہیں، اپوزیشن کی کامیابی سمجھی جاتی ہے۔ صد شکر کہ دھینگا مشتی نے طول نہ پکڑا، اور اگلے روز متفقہ قرارداد منظور کر کے کشمیر کے مسئلے پر یکسوئی کا پیغام دے ڈالا گیا۔ شیخ رشید کی یک نفری جماعت کے علاوہ عمران خان کو کسی اور سیاسی جماعت کی تائید حاصل نہیں ہو سکی۔ انہوں نے آصف علی زرداری پر اس طرح تنقید کی کہ پیپلزپارٹی خم ٹھونک کر ان کے سامنے آ گئی۔عمران خان صاحب کا کہنا ہے کہ وہ ’’سولو فلائٹ‘‘ نہ کریں تو اور کیا کریں؟ انہوں نے بار بار یہ بات بھی کہی کہ دوسرے سیاسی رہنماؤں سے اُنہیں رشتہ مانگنا تو مقصود نہیں ہے کہ جو بار بار ان کی منت سماجت کریں۔یہ بات واضح ہے کہ30اکتوبر کے احتجاجی ہلّے میں سارا بوجھ عمران خان اور ان کی جماعت نے اپنے کاندھوں پر اُٹھا لیا ہے۔ وہ مُلک بھر سے اپنے حامی جمع کر کے وزیراعظم کو استعفے پر مجبور کرنا چاہتے ہیں۔ ان کا یہ چیلنج صرف برسر اقتدار جماعت کے لیے نہیں، بلکہ ہر اُس شخص کے لیے ہے، جو دستور کی حاکمیت پر یقین رکھتا اور اُس ہی کے ذریعے حکومت کی تبدیلی کا خواہاں ہے۔ دستور کے مطابق وزیراعظم کو قومی اسمبلی کی اکثریت کا اعتماد جب تک حاصل ہے،اُنہیں محرومِ اقتدار نہیں کیا جا سکتا۔ دوسری صورت یہ ہے کہ عدالت سے کوئی فیصلہ حاصل کر لیا جائے۔ اس کے علاوہ کوئی بھی راستہ دستور کو سبوتاژ کیے بغیر کشادہ نہیں کیا جا سکتا۔ یہ درست ہے کہ کرپشن ختم ہونی چاہئے، یہ بھی درست ہے کہ پانامہ لیکس کی تحقیقات ہونی چاہئے،لیکن یہ بھی درست ہے کہ ایک انگلی اگر زخمی ہو جائے تو اس کا علاج دوسری انگلی کو زخمی کر لینے سے نہیں ہو سکتا۔ کرپشن ایک دن میں پیدا ہوتی، نہ ایک دن میں ختم ہو سکتی ہے۔ اگر یہ معاملہ ایسا ہی آسان ہوتا تو خیبرپختونخوا میں اِس نام کی کوئی شے موجود نہ رہتی۔کشمیری عوام کی حقِ خود ارادیت کی تحریک جب نئی طاقت اور جولانی سے آشنا ہو رہی ہو اور پاکستانی عوام پوری دُنیا کو اس کی طرف متوجہ کرنے کے لیے پُرجوش ہوں تو پاکستانی عوام کا حقِ خود ارادیت کیسے سلب کیا جا سکتا ہے؟ یا یوں کہے کہ اسے سلب کرنے کی خواہش پال کر کشمیریوں کی لڑائی کیسے لڑی جا سکتی ہے؟ اسلام آباد پر غاصبانہ قبضہ کرنے کی خواہش پالنے والے سری نگر کی آزادی کا پرچم کیسے لہرائیں گے؟

(یہ کالم روزنامہ ’’ پاکستان‘‘ اور روزنامہ ’’دنیا‘‘ میں بیک وقت شائع ہوتا ہے)

مزید : کالم