سعودی اتحادی طیاروں کی یمنی وزیر داخلہ کے والد کے جنازے پر بمباری، 100سے زائد افراد جاں بحق

سعودی اتحادی طیاروں کی یمنی وزیر داخلہ کے والد کے جنازے پر بمباری، 100سے زائد ...

صنعا (نیوز ڈیسک) برادر اسلامی ملک یمن خانہ جنگی کی کیفیت میں ہے جہاں ایک طرف حوثی باغی ہیں تو دوسری جانب سعودی اتحادی افواج ہیں جو ایک دوسرے کے خلاف برسر پیکار ہیں اور وہاں سے ہر روز افسوسناک خبریں سننے کو ملتی ہیں۔ آج بھی یمن سے ایک افسوسناک خبر آئی ہے جس میں سعودی اتحادی طیاروں نے وزیر داخلہ کے والد کے جنازے کو نشانہ بنایا اور 100 سے زائد لوگوں کو مارڈالا۔ یمنی صحافی حسین البخیتی نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک پیغام میں بتایا کہ ہفتہ کے روز پاکستانی وقت کے مطابق شام 6 بجے کے قریب سعودی عرب اور متحدہ عرب کے لڑاکا طیاروں نے صنعا کے علاقے حدہ میں موجود ’’ دی گریٹ ہال‘‘ میں ہونے والے ایک جنازے پر شدید قسم کی بمباری کی جس کے نتیجے میں درجنوں افراد مارے گئے۔ انہوں نے بتایا کہ یمن کے وزیر داخلہ جنرل رویشن کے والد کا جنازہ گریٹ ہال میں ادا کیا جارہا تھا جس میں یمن کے سینئر سیاستدان اور قبائلی رہنماؤں سمیت ہزاروں لوگ موجود تھے۔ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے طیاروں نے ہال پر تین حملے کیے۔ پہلے اور دوسرے حملے میں جنازے کو نشانہ بنایا گیا جبکہ تیسرے حملے میں امدادی ٹیموں کو نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں درجنوں افراد مارے گئے۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ سعودی اتحادی طیاروں کی بمباری کے نتیجے میں مارے جانے والے افراد کی تعداد ایک سو سے زیادہ ہوسکتی ہے۔

مزید : صفحہ آخر