پہلی ای کامرس پالیسی کی منظوری حکومت کاقابل ستائش اقدام اسلام آباد چیمبر

پہلی ای کامرس پالیسی کی منظوری حکومت کاقابل ستائش اقدام اسلام آباد چیمبر

 اسلام آباد (آن لائن) اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر محمد احمد وحید نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے ملک کی پہلی ای کامرس پالیسی کی منظوری دے کر ایک قابل ستائش اقدام کیا ہے کیونکہ اس سے ملک میں ای کاروبار کو بہتر فروغ ملے گا، نوجوانوں کیلئے روزگار کے بے شمار نئے مواقع پیدا ہوں گے اور برآمدات میں بھی اضافہ ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ای کامرس کاروباراس وقت دنیا میں تیزی سے ترقی کر رہا ہے کیونکہ یونائیٹڈ نیشنز کانفرنس برائے ٹریڈ اینڈ ڈویلپمنٹ کی ایک رپورٹ کے مطابق ۲۰۱۷ میں ای کامرس سیلز میں تیرہ فیصد اضافہ ہوا جو بڑھ کر تقریبا ۲۹ کھرب ڈالر تک پہنچ چکی تھی۔ انہوں نے کہا کہ چین کی مجموعی قومی پیداوار میں ای کامرس کا حصہ ۱۶ فیصد ہے جبکہ انڈیا کے جی ڈی پی میں ۱۵ فیصد ہے لیکن پاکستان میں مختلف وجوہات کی وجہ سے ای کامرس ابھی تک اپنی اصل صلاحیت کے مطابق ترقی نہیں کر سکی۔ احمد احمد وحید نے اس امید کا اظہار کیا کہ پہلی ای کامرس پالیسی کی منظوری ای کامرس سیکٹر کو فروغ دینے میں مفید کردار ادا کرے گی اور ای تجارت و برآمدات کو فروغ دینے میں سہولت فراہم کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ای کامرس پالیسی کے تحت حکومت سرکاری و نجی شعبوں کے نمائندگان پر مشتمل ایک نیشنل ای کامرس کونسل قائم کرے گی لہذا انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چیمبر کے وقتی صدر کو بھی اس کونسل میں شامل کیا جائے تا کہ وہ کونسل میں ایس ایم ایز کے مفادات کا تحفظ کر سکے۔ اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سینئر نائب صدر طاہر عباسی اور نائب صدر سیف الرحمٰن خان نے کہا کہ حکومت ای کامرس پالیسی پر مکمل عمل درآمد یقینی بنائے تا کہ معیشت اس کے ثمرات سے مستفید ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ای کامرس کے فروغ پانے کے عمدہ مواقع موجود ہیں کیونکہ ہمارے پاس آئی ٹی پروفیشنلز کی کثیر تعداد موجود ہے لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ حکومت ای کامرس شعبے کیلئے سازگار ماحول فراہم کرے۔ انہوں نے کہا کہ ای کامرس کی ترقی کیلئے یہ ضروری ہے کہ حکومت پے پال سمیت دیگر انٹرنیشنل پیمنٹ گیٹ ویز کی پاکستان میں دستیابی کو یقینی بنائے تا کہ ای کامرس سیلز کی ادائیگیوں میں سہولت ہو۔ انہوں نے کہا کہ ای کامرس پالیسی پر مناسب عمل درآمد سے خواتین انٹرپرینیورز کی حوصلہ افزائی ہو گی۔

جبکہ مائیکرو، سمال اینڈ میڈیم سائز کے کاروباری اداروں کو بھی بہتر فروغ ملے گا جس سے پاکستان کی معیشت مشکلات سے نکل کر پائیدار ترقی کی طرف گامزن ہو سکے گی۔

مزید : کامرس /رائے


loading...