رجسٹری برانچ کینٹ،سائلوں کا کاؤنٹر پر بے پناہ رش، کرونا پھیلنے کاخدشہ

  رجسٹری برانچ کینٹ،سائلوں کا کاؤنٹر پر بے پناہ رش، کرونا پھیلنے کاخدشہ

  

ملتان (نیوز رپورٹر) حکومت کی جانب سے کورونا وباء  کی روک تھام کے لیئے احتیاطی ایس او پیز پر عملدرآمد کو یقینی بنانے بارے میڈیا سمیت متعدد فورم پر ترغیبی مہم کے باوجود ضلعی انتظامیہ کے ذیلی ادارے رجسٹری برانچ کینٹ کے کاونٹر اور ہال میں موجود ملازمین سمیت سائلین شہر میں کورونا وباء  کو مزید تقویت دینے کا باعث بن رہے ہیں پچھلے ایک ماہ کے دوران(بقیہ نمبر42صفحہ6پر)

 ضلعی انتظامیہ کے اعلی حکام نے رجسٹری برانچ میں متعدد وزٹ کرنے کے باوجود اس اہم وبائی مسئلہ پر سنجیدگی سے توجہ نہیں دی انتظامیہ کی یہ غفلت کو چراغ تلے اندھیرے کے مترادف ہے کہ جو افسران پچھلے چھ ماہ تک شہریوں کو کورونا وباء  سے بچاو اور اس کے پھیلنے کے سدباب بارے دن رات ایک کیئے ہوئے تھے ملک بھر میں تجارتی مراکز و مارکیٹیں بند کی جارہی تھیں سمارٹ لاک ڈاون کی پابندیاں عائد کی جارہی تھیں جبکہ ان کی اپنی ناک کے نیچے ایس او پیز کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں رجسٹری برانچ کینٹ کے کاونٹر پر صبح سے لیکر شام پانچ بجے تک سائلین کا اڑدھام رہتا ہے جن کی اکثریت باہمی فاصلہ تو بہت دور کی بات چہرے پر ماسک لگانا بھی ضروری نہیں سمجھتی اور اس ضمن میں کینٹ برانچ کے رجسٹرار سمیت ان کا عملہ بھی اس حوالے سے اپنی اخلاقی ذمہ داری سمجھنے سے قاصر ہے شہریوں نے کمشنر ملتان جاوید محمود اختر سے مطالبہ کیا ہے رجسٹری برانچ میں آنے والے سائلین و وثیقہ نویسوں کو ایس او پیز پر سختی سے عمل کرنے کا پابند کیا جائے اور سب رجسٹرار کینٹ کو بھی پابند کیا جائے کہ وہ خود کو آفس تک محدود رکھنے کی بجائے کاونٹر پر آنیوالے سائلین کو باہمی فاصلہ اور ماسک کو یقینی بنانے کے لیئے ذاتی دلچسپی لیکر اقدامات کریں۔

خدشہ 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -