ویمن یونیورسٹی ملتان، توہین عدالت کی  رٹ،وی سی، خزانہ دار15اکتوبر کو طلب

  ویمن یونیورسٹی ملتان، توہین عدالت کی  رٹ،وی سی، خزانہ دار15اکتوبر کو طلب

  

   ملتان (سپیشل رپورٹر) ویمن یونیورسٹی ملتان کے 8 اسسٹنٹ رجسٹراروں (بقیہ نمبر14صفحہ6پر)

 نے وائس چانسلر اور خزانہ دار کے خلاف  توہین عدالت کی رٹ دائر کردی، عدالت نے دونوں فریقین کو 15 اکتوبر کو طلب کرلیا، تفصیل کے مطابق ویمن یونیورسٹی ملتان کے 8 رجسٹراروں کی درخواست پر عدالت عالیہ لاہور نے 14ماہ قبل وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر عظمیٰ قریشی اور خزانہ دار ریحان قادر کو حکم دیا تھا کہ 8 اسسٹنٹ رجسٹرار  جن  میں  محمد  کامران،  بینظیر پیٹر،  عروسہ اختر، سنبل ہاشمی، سبطین، احمد فراز. طلحہ سعیداور محمد  اسلم شامل تھے ان کو ایڈوانس انکریمنٹ اور ان کے بقاجات فوری ادا کئے جائیں مگر وائس چانسلر اور خزانہ دار  عدالتی حکم کو خاطر میں نہ لائے اور  واجبات دینے سے انکار کردیا جس پر متاثرین نے گزشتہ روز توہین عدالت کی رٹ دائر کرتے ہوئے مؤقف  اختیار کیا کہ  وائس چانسلر نے غیر قانونی طور پر اسسٹنٹ خزانہ دار ریحان قادر جو 17 گریڈ کا ہے کو گریڈ 20 دے کر تعینات کیا ہوا ہے وی سی ڈاکٹر عظمیٰ قریشی کی آشیرباد سے  پرو وائس چانسلر کا سٹیٹس بھی انجوائے کررہا ہے علاوہ ازیں وائس چانسلر ان کے ہر غیر قانونی کام کی حمایت بھی کرتی ہیں، جبکہ خزانہ دار کی سیٹ گریڈ 20 کی ہے اور ایکٹ کے مطابق  آئینی سیٹ پر صرف خاتون  ہی اپنے فرائض سرانجام دے سکتی ہے،  جیسا کہ کنٹرولر امتحانات ڈاکٹر حنا علی اور رجسٹرار پروفیسر فرزانہ اکرم رانا تعینات ہیں لیکن ریحان قادر وائس چانسلر کا منظورِ نظر ہے اس لئے عدالت عالیہ کے احکامات کو بھی تسلیم کرنے سے انکار کردیا جس پر مسٹر جسٹس رسال حسین سید  کی عدالت نے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر عظمیٰ قریشی اور خزانہ دار  ریحان قادر کو 15 اکتوبر کو طلب کرلیا ہے۔ 

طلب

مزید :

ملتان صفحہ آخر -