وہ ایک شخص کہ منزل بھی، راستہ بھی ہے| عطاالحق قاسمی |

وہ ایک شخص کہ منزل بھی، راستہ بھی ہے| عطاالحق قاسمی |
وہ ایک شخص کہ منزل بھی، راستہ بھی ہے| عطاالحق قاسمی |

  

وہ ایک شخص کہ منزل بھی، راستہ بھی ہے

وہی دُعا بھی، وہی حاصلِ دعا بھی ہے

میں اسکی کھوج میں نکلا ہوں ساتھ لے کے اُسے

وہ حسن مجھ پہ عیاں بھی ہے اور چھپا بھی ہے

میں در بدر تھا، مگر بھول بھول جاتا تھا

کہ اِک چراغ دریچے میں جاگتا بھی ہے

کھلا ہے دل کا دریچہ اُسی کی دستک پر

جو مجھ کو میری نگاہوں سے دیکھتا بھی ہے

یہ میری سرحدِ جاں میں قدم دھرا کِس نے

کہ محوِخواب ہوں، آنکھوں میں رت جگا بھی ہے

اُسے وہ بھولنے لگتا ہے، جو اسے بھولے

عطا کہ دل زدہ بھی ہے اور سرپھرا بھی ہے

شاعر: عطاالحق قاسمی

Wo    Aik   Shakhs   Keh    Manzill   Bhi  ,   Raasta   Bhi   Hay

Wahi Dua Bhi , Wahi Haasil-e-Dua   Bhi   Hay

Main   Uss   Ki   Khoj   Men   Nikla   Hun   Saath   Lay   K   Usay

Wo   Husn   Mujh   Pe   Ayaan   Bhi   Hay   Aor   Chupta   Bhi   Hay

 

Main    Darbadar   Tha  ,   Magar   Bhool    Bhool    Jaata  Tha

Keh   Ik   Charaagh   Dareechay   Men    Jaagta   Bhi   Hay

 Khula   Hay   Dil   Ka    Dareecha    Usi   Ki    Dastak   Par

Jo   Mujh    Ko     Meri    Nigaahon    Say    Dekhta    Bhi   Hay

 Yeh    Meri    Sarhad-e-Jaan    Men    Qadam   Dhara    Kiss   Nay

Keh   Mahv-e-Khaab    Hun  ,   Aankhon    Men    Rat   Jaagta   Bhi   Hay

 Usay    Wo    Bhoolnay     Lagta    Hay  ,   Jo    Usay   Bhoolay

ATA   Keh   Dil    Zadaa   Bhi   Hay   Aor   Sar   Phiraa   Bhi   Hay

 Poet: Ata    Ul   Haq   Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -