وہ گرد ہے کہ وقت سے اوجھل تو میں بھی ہوں| عطاالحق قاسمی |

وہ گرد ہے کہ وقت سے اوجھل تو میں بھی ہوں| عطاالحق قاسمی |
وہ گرد ہے کہ وقت سے اوجھل تو میں بھی ہوں| عطاالحق قاسمی |

  

وہ گرد ہے کہ وقت سے اوجھل تو میں بھی ہوں

پھر بھی غبار جیسا کوئی پل تو میں بھی ہوں

خواہش کی وحشتوں کا یہ جنگل ہے پر خطر

مجھ سے بھی احتیاط کہ جنگل تو میں بھی ہوں

لگتا نہیں کہ اس سے مراسم بحال ہوں

میں کیا کروں کہ تھوڑا سا پاگل تو میں بھی ہوں

وہ میرے دل کے گوشے میں موجود ہے کہیں

اور اس کے دل میں تھوڑی سی ہلچل تو میں بھی ہوں

نکلے ہو قطرہ قطرہ محبت تلاشنے

دیکھو ادھر کہ پیار کی چھاگل تو میں بھی ہوں

کیسے اسے نکالوں میں زندانِ ذات سے

زندانِ ذات ہی میں مقفل تو میں بھی ہوں

ماضی کے آئنے میں عطاؔ کوئی خوش ادا

شکوہ کناں تھا کہتا تھا سانول تو میں بھی ہوں

شاعر: عطاالحق قاسمی

Wo    Gard   Hay   Keh  Waqt   Say   Ojhal   To   Main   Bhi   Hun

Phir   Bhi    Ghubaar    Jaisa    Koi   Paal   To   Main   Bhi   Hun

 Khaahish    Ki    Wehshaton    Ka   Yeh    Jangal    Hay    Pur   Khatar

Mujh   Say    Bhi    Ehtiyaat    Keh   Jangal   To   Main   Bhi   Hun

 Lagta    Nahen    Keh    Uss   Say  Maraasam    Bahaal   Hon

Main    Kaya    Karun    Keh    Thorra    Sa   Paagal   To   Main   Bhi   Hun

 Wo    Meray    Dil   K   Goshay   Men   Maojood    Hay   Kahen 

Aor    Uss   K    Dil    Men    Thorri   Si   Halchal   To   Main   Bhi   Hun

 Niklay   Hon    Qatra    Qatra    Muhabbat   Talaashnay

Dekho    Idhar    Keh    Payaar   Ki    chhaagal   To   Main   Bhi   Hun

 Kaisay    Usay    Nikaalun    Main   Zindaan -e-Zaat   Say

Zindaan-e-Zaat    Hi   Men   Muqaffal   To   Main   Bhi   Hun

 Maazi    K   Aainay   Men    ATA    Koi   Khush   Adaa

Shikwa    Kunaan    Tha    Kehta   Tha   Saanwal   To   Main   Bhi   Hun

 

Poet: Ata   Ul   Haq   Qasmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -