تھوڑی سی اس طرف بھی نظر ہونی چاہیے| عطاالحق قاسمی |

تھوڑی سی اس طرف بھی نظر ہونی چاہیے| عطاالحق قاسمی |
تھوڑی سی اس طرف بھی نظر ہونی چاہیے| عطاالحق قاسمی |

  

تھوڑی سی اس طرف بھی نظر ہونی چاہیے

یہ زندگی تو مجھ سے بسر ہونی چاہیے

آئے ہیں لوگ رات کی دہلیز پھاند کر

ان کے لئے نویدِ سحر ہونی چاہیے

اس درجہ پارسائی سے گھٹنے لگا ہے دم

میں ہوں بشر خطاے بشر ہونی چاہیے

وہ جانتا نہیں تو بتانا فضول ہے

اس کو مرے غموں کی خبر ہونی چاہیے

شاعر: عطاالحق قاسمی

Thorri   Si   Iss   Taraff    Bhi    Nazar   Honi   Chaahiay

Yeh   Zindagi   To   Mujh   Say   Basar   Honi   Chaahiay

 Aaey   Hen    Log   Raat   Ki   Dehleez    Phaand   Kar

In   K   Liay    Naveed -e- Sahar   Honi   Chaahiay

 Iss    Darja    Paarsaai    Say   Ghutnay    Laga    Hay   Dam

Main    Hun   Bashar   Khataa-e-Bashar   Honi   Chaahiay

 Wo    Jaanta   Nahen   To   Bataana    Fuzool   Hay

Uss    Ko  Miray    Ghamon    Ki    Khabar   Honi   Chaahiay

 Poet: Ata   Ul   Haq   Qasmi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -