لا پھر اِک بار وہی بادہ و جام اے ساقی| علامہ اقبال |

لا پھر اِک بار وہی بادہ و جام اے ساقی| علامہ اقبال |
لا پھر اِک بار وہی بادہ و جام اے ساقی| علامہ اقبال |

  

لا پھر اِک بار وہی بادہ و جام اے ساقی

ہاتھ آ جائے مجھے میرا مقام اے ساقی

تین سو سال سے ہیں ہند کے میخانے بند

اب مناسب ہے ترا فیض ہو عام اے ساقی

مری مینائے غزل میں تھی ذرا سی باقی

شیخ کہتا ہے کہ ہے یہ بھی حرام اے ساقی

شیر مردوں سے ہوا بیشۂ تحقیق تہی

رہ گئے صوفی و  ملا کے غلام اے ساقی

عشق کی تیغ جگردار اڑا لی کس نے

علم کے ہاتھ میں خالی ہے نیام اے ساقی

سینہ روشن ہو تو ہے سوزِسخنِ عین حیات

ہو نہ روشن تو سخن مرگِ دوام اے ساقی

تو مری رات کو مہتاب سے محروم نہ رکھ

ترے پیمانے میں ہے ماہِ تمام اے ساقی

شاعر: علامہ اقبال

(مجموعۂ کلام:بالِ جبریل )

Laa   Phir   Ik   Baar   Wahi   Baada -o-Jaam   Ay   Saaqi

Haath   Aa    Jaaey    Mujhay    Mera  Maqaam   Ay   Saaqi

Teen    Sao    Saal   Say   Hen    Hind   K   Maikhaanay   Band

Ab    Munaasib    Hay   Tira    Faiz   Ho    Aam   Ay   Saaqi

Miri   Meena-e-Ghazal    Men    Thi    Zaraa   Si   Baaqi

Shaikh    Kehta   Hay   Keh   Hay   Yeh   Bhi   Haraam   Ay   Saaqi

Shair    Mardon   Say   Hua   Baisha-e-Tehqeeq  Tahi

Reh    Gaey   Soofi -o-Mulla   K   Ghulaam   Ay   Saaqi

Eshq   Ki   Taigh    Jigar   Waar    Uraai   Kiss   Nay

Alam   K   Haath   Men    Khaali   Hay   Nayaam     Ay   Saaqi

Seena   Raoshan   To    Hay   Soz-e-Sukhan    Ain   Hayaat

Ho    Na   Roshan   To   Sukhan   Marg-e-Dawaam   Ay   Saaqi

Tu    Miri    Raat   Ko   Mehtaab   Say    Mehroom    Na    Rakh

Tiray    Paimaanay    Men    Hay   Maah-e-Tamaam    Ay   Saaqi

Poet: Allama   Iqbal

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -