تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ| علامہ اقبال |

تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ| علامہ اقبال |
تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ| علامہ اقبال |

  

​تجھے یاد کیا نہیں ہے میرے دل کا وہ زمانہ

وہ ادب گہِ محبت وہ نِگہ کا تازیانہ​

یہ بُتانِ عصْرِحاضر کے بنے ہیں مدرِسے میں

نہ ادائے کافرانہ نہ تراشِ آذرانہ​

نہیں اِس کھُلی فضا میں کوئی گوشۂ فراغت

یہ جہاں عجب جہاں ہے نہ قفس، نہ آشیانہ​

رگِ تاک منتَظر ہے تِری بارشِ کرَم کی

کہ عجم کے میکدوں میں نہ رہی مئے مغانہ​

مِرے ہم صفیراِسے بھی اثرِ  بہار سمجھے

اِنہیں کیا خبر کہ کیا ہے یہ نوائے عاشقانہ​

مِرے خاک وخوں سے تو نے یہ جہاں کیا ہے پیدا

صلۂ شہید کیا ہے؟ تب و تاب جاوِدانہ​

تِری بندہ پروَرِی سے مرے دن گزر رہے ہیں

نہ گِلہ ہے دوستوں کا نہ شکایتِ زمانہ​

شاعر: علامہ اقبال

(مجموعۂ کلام:بالِ جبریل )

Tujhay   Yaad   Kaya   Nahen   Hay   Miray    Dil   Ka   Wo    Zamaana

Wo    Adab    Gah-e-Muhabbat    Wo   Nigah   Ka   Taazyaanna

Yeh   Butaan-e-Asr-e-Haazir   Keh   Banay   Hen   Madrasay   Men

Na    Adaa-e-Kafaraana  ,   Na    Taraash   Aazraana

Nahen    Iss     Khuli    Fazaa    Men    Koi   Gosha-e-Faraaghat

Yeh    Jahaan   Ajab    Jahaan    Hay    Na    Qafass   Na   Aashyaana

Rag-e-Taak   Mutazir    Hay    Tiri    Baarish-e-Karam    Ki

Keh    Ajam    K    Maykadon    Men    Na    Rahi   May-e-Mughaana

Miray   Ham    Safeer    Isay    Bhi     Asar-e-Bahaar    Samjhay

Inhen    Kaya    Khabar    Keh    Kaya    Hay   Yeh   Nawaa-e-Aashqaana

Miray    Khaak-o-Khoon    Say   Tu   Nay   Yeh   Jahaan    Kiya   Hay   Paida

Sila-e-Shaheed    Kaya   Hay  Tab-o-Taab-e-Jaawdaana

Tiri    Banda    Parwari   Say    Miray   Din    Guzar    Rahay   Hen

Na    Gila    Hay    Doston    Ka    Na    Shikaayat -e-Zamaana

Poet: Allama   Iqbal

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -